خواتین اینکرز کے خلاف سوشل میڈیا مہم کے پیچھے کون؟

خواتین اینکرز کے خلاف سوشل میڈیا مہم کے پیچھے کون؟ کیا یہ خواتین کسی مخصوص ایجنڈے پر ہیں اور پاکستان کو بدنام کررہی ہیں؟ کیا یہ خواتین سیاسی جماعتوں کے ایماء پر فیک نیوز پھیلارہی ہیں؟ سنئے صدیق جان سے

اپنے ویڈیو لاگ میں صدیق جان نے کہا کہ آپ نے دیکھا ہوگا کہ دو روز سے ایک مہم چل رہا ہے جس میں خواتین کا ایک گروپ پیش پیش ہے جو پاکستان کا نیگیٹو امیج پیش کررہی ہیں جیسے پاکستان خواتین صحافیوں کے لئے بہت مشکل مہم ہے۔چند ایک خواتین کو چھوڑکر اگر آپ باقی خواتین کو دیکھیں انکے آپ کو ایک پارٹی کے حق میں تجزئیے اور ٹویٹس نظر آئیں گے۔

صدیق جان کا مزید کہنا تھا کہ یہ خواتین حکومت مخالف کارکن کے طور پر Behaveکرتی نظر آئیں گی۔ اگر ن لیگ والے خواتین کے جبڑوں میں گولیاں مارکرشہید کردیں توانکی یہ مہم نظر نہیں آتی۔ اگر عزیز میمن کو شہید کردیں تو بلاول کے خلاف انکی وہ مہم نظر نہیں آتی۔ اندازہ لگائیں کہ انکی اس مہم پر بلاول نے نوٹس لے لیا، اس بلاول نے جو صحافیوں کو دھمکیاں دیتے ہیں، جن کے اپنے صوبے میں ایک صحافی عزیز میمن کا قتل ہوا لیکن بلاول نے اس پر آواز اٹھائی۔

صدیق جان کے مطابق یہ خواتین عورت مارچ کی حامی ہیں لیکن کوئی انکی بات سے اختلاف کرے یا انکی تصحیح کرنے کی کوشش کرے تو یہ وہاں عورت کارڈ لیکر آجاتی ہیں۔ یہ خواتین یہ کہتی ہیں کہ عورت اور مرد برابر ہیں، انہیں طعنہ نہ دیا جائے لیکن جب انکی فیک نیوز کی وضاحت کی جائے یا جواب دیا جائے تو یہ وہاں عورت کارڈ لیکر آجاتی ہیں۔ ہمارے معاشرے میں فرسٹریشن بھی بہت زیادہ ہے ، یہ جب لوگ کچھ لوگوں کے روئیے دیکھتے ہیں جو ہر وقت نیگیٹیویٹی پھیلاتے ہیں، چیزوں کو توڑمروڑ کر پیش کرتے ہیں تو گالیان دیتے ہیں یہ کوئ جسٹی فیکیشن نہیں ہے۔ گالی بالکل نہیں دینی چاہئے۔

صدیق جان نےمزید کہا کہ تحریک انصاف کے تین اکاؤنٹس اظہرمشوانی، موسیٰ ورک یا ڈاکٹراسلان کے اکاؤنٹ دیکھ لیں یہ فیک نیوز کا جواب دیتے نظر آتے ہیں۔ تو اس پر موسیٰ ورک نے ان خواتین کی درجنوں فیک نیوز ٹویٹ کی ہیں۔ انہیں ایکسپوز کیا ہے کہ یہ آپکی خبر غلط تھی، یہ بھی آپکی غلط خبر تھی، آپ کو اصل خطرہ آپکی فیک نیوز، جھوٹ پھیلانے اور عادات کی وجہ سے ہے۔ اگر آپ کوئی سکینڈل حکومت کا لیکر آئی ہیں جس میں جان ہے تو اس پر گالیاں دینا قابل مذمت ہے۔ یہ نہیں ہونا چاہئے کہ اگر آپ کو کوئی کہے کہ یہ خبر جھوٹ ہے تو اس پر تکلیف ہوتی ہے۔

ان خواتین کے کریڈٹ پر دیکھیں تو 90 فیصد خواتین کے کریڈٹ پر کوئی بڑی خبر نہیں ہے، انکے اپنے ایجنڈے ہیں، سیاسی جماعتوں سے تعلقات ہیں۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >