معافی ناکافی، امریکی سفارتخانے کے ٹویٹ پر فواد چوہدری اور شیریں مزاری کا سخت ردعمل

فواد چودھری نے امریکی سفارتخانے کے متنازع عمل کو اپنے ملک کیلئے باعث شرمندگی قرار دیا، تحقیقات کا مطالبہ

وفاقی وزیر فواد چودھری نے نجی ٹی وی چینل کے پروگرام بڑی بات میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ جب احسن اقبال کے ٹوئٹ اور امریکی ایمبیسی کی جانب سے ری ٹوئٹ کا معاملہ سامنے آیا تو وہ پہلے اس کو جعلی سمجھ رہے تھے مگر جب انہیں پتہ چلا کہ یہ اصلی ہے تو انہیں تشویش ہوئی۔

ایک سوال کے جواب میں فواد چودھری نے کہا کہ امریکی سفارتخانے کی جانب سے ایسا بیان اور اس پر یہ تسلیم کرتے ہوئے کہنا کہ کسی غیر متعلقہ شخص نے اس اکاؤنٹ کو استعمال کیا تو یہ امریکی سفارتخانے کا انتہائی غیر ذمہ دارانہ رویہ ہے۔

وفاقی وزیر سائنس و ٹیکنالوجی نے کہا کہ شہر اقتدار میں رہنے والے لوگ جانتے ہیں کہ امریکی سفارتخانے کی سیکیورٹی اور سسٹم انتہائی فول پروف ہے اگر ایسی جگہ کا ٹوئٹر اکاؤنٹ اتنی آسانی سے غیر متعلقہ لوگوں کی پہنچ میں ہے تو یہ سپر پاور کہلانے والے امریکہ کے لیے باعث شرمندگی ہے۔

وفاقی وزیر نے کہا کہ اس عمل کی تحقیقات کی جانی چاہییں اور ذمہ دار کو سامنے لایا جانا چاہیے۔ کیونکہ اس طرح یہ پتہ چلتا ہے کہ امریکی سفارتخانے کا ڈیٹا محفوظ نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر ایسا نہیں ہوتا تو یہ صورتحال انتہائی سنگین موڑ اختیار کرے گی۔

دوسری جانب وفاقی وزیر شیریں مزاری نے اسے ناکافی قرار دیا ہے۔

اپنے ٹوئٹ میں انہوں نے کہا کہ خاص طور پر اتنی تاخیر سے یہ (معافی) کافی نہیں۔ یہ بات واضح ہے کہ اکاؤنٹ ہیک نہیں ہوا تھا تو کسی ’’غیر مجاز‘‘ شخص کو اس تک رسائی دی گئی۔ یہ قابل قبول نہیں کہ کوئی امریکی سفارت خانے میں کام کرتے ہوئے کسی سیاسی جماعت کا ایجنڈا آگے بڑھائے۔ ویزوں کے لیے جانچ پڑتال کرنے والے عملے سمیت اس کے سنگین نتائج ہوسکتے ہیں۔

امریکی سفارت خانے نے ڈونلڈ ٹرمپ کی شکست پر احسن اقبال کے ٹوئٹ کو ری ٹویٹ کر دیا تھا۔ سوشل میڈیا صارفین نے امریکی سفارت خانے سے معافی مانگنے کا مطالبہ کیا تھا جس کے بعد امریکی سفارت خانے نے احسن اقبال کا ری ٹوئٹ اپنے ٹویٹر ہینڈل سے ہٹا دیا اور معافی مانگ لی۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >