متحدہ عرب امارات نے بھی پاکستان کیلئے ورک ویزے کیوں بند کردئیے؟

پاکستان میں کورونا کی صورتحال خراب، یو اے ای کی جانب سے پاکستانیوں کو ویزا جاری کرنے پر پابندی عائد

رواں ماہ 19 نومبر کو متحدہ عرب امارات کی جانب سے پاکستانیوں کو ورک ویزا جاری کرنے پر پابندی عائد کر دی گئی، اس حوالے سے ڈائریکٹر جنرل بیورو آف امیگریشن اینڈ اوور سیز ایمپلائمنٹ (ڈی جی بی ای او ای) کاشف نور خان نے بتایا کہ اس پابندی میں پاکستان سمیت 20 ممالک شامل ہیں۔

تاہم اب صورتحال مختلف دکھائی دیتی ہے کیونکہ پیپلز پارٹی کے سابق سینیٹر انور بیگ کا دعویٰ ہے کہ اس پابندی کا شکار صرف پاکستان ہی بنا ہے، انور بیگ کا خاندان 1943 سے افرادی قوت کی برآمد کے کاروبار سے وابستہ ہے۔ ان کا دعویٰ ہے کہ اس پابندی کا اطلاق صرف پاکستانیوں پر کیا گیا ہے اور اس کی یو اے ای حکومت کی جانب سے کوئی وجہ بھی نہیں بتائی گئی۔

انور بیگ نے یہ تفصیلات روزنامہ جنگ کے سینئر صحافی انصار عباسی سے شیئر کیں ان کا کہنا تھا کہ اس حوالے سے دفتر خارجہ کے ترجمان بھی کہہ چکے ہیں کہ متحدہ عرب امارات نے عارضی طور پر پاکستان سمیت درجن بھر ممالک کیلئے وزٹ ویزے کا اجرا روک دیا ہے۔

انور بیگ نے کہا کہ اماراتی حکام کی جانب سے کیا جانے والا یہ فیصلہ ایسا لگتا ہے کہ کورونا کی دوسری لہر کی وجہ سے کیا گیا ہے۔ قومی ایئر لائن پی آئی اے کے ترجمان عبداللہ حفیظ نے بھی تصدیق کی ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ جن لوگوں کے پاس اقامہ، ٹرانزٹ اور ورک ویزا ہے انہیں متحدہ عرب امارات میں داخلے کی اجازت دی جا رہی ہے جب کہ دیگر کیلئے اب تک ایئرلائن کو تحریری ہدایات جاری نہیں کی گئیں۔

انور بیگ نے بھی اس بات کی تصدیق کی کہ جن لوگوں کے پاس پہلے سے ورک ویزا ہے انہیں امارات میں داخل ہونے دیا جا رہا ہے، 19 نومبر سے کسی پاکستانی کو نیا ورک ویزا جاری نہیں کیا جا رہا۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>