اسلام آباد ہائی کورٹ پر وکلاء کا حملہ: حامد خان کا اصل چہرہ سامنے آگیا، صدیق جان

اسلام آباد ہائی کورٹ حملہ میں ملوث وکلاء کے وکیل ایڈووکیٹ حامد خان کا اصل چہرہ سامنے آگیا ہے۔۔۔ انصاف اور قانون کی بالادستی کرنیوالے حامد خان کیسے بدمعاشی اور غنڈہ گردی کرنیوالے وکلاء کے وکیل بن گئے؟ جانئے صدیق جان سے

صدیق جان نے کہا کہ حامد خان کی کسی بھی ٹاک شو میں گفتگو سن لیں وہ آئین سے شروع ہوکر قانون پر ختم ہوتی ہے، ان کی باتیں سن کر ایسا محسوس ہوتا ہے کہ ان سے بڑا قانون کو علمبردار پاکستان میں کوئی ہے ہی نہیں۔

صدیق جان نے مزید کہا کہ حامد خان نے تحریک انصاف چھوڑنے کے بعد عمران خان کے خلاف گفتگو شروع کردی کہ عمران خان اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ مل گئے ہیں، انہوں نے چوروں کو ساتھ ملا لیا ہے وغیرہ وغیرہ۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ قانون و انصاف کی بڑی بڑی باتیں کرنے والے حامد خان آج عدالت میں کھڑے ہوکر یہ فرما رہے تھے کہ ہائی کورٹ پر حملہ کرنے والے وکلاء کو رہا کردیں کوئی ٹرائل یا کوئی کارروائی نہ کریں بس ان کو رہا کردیں۔

انہوں نے کہا کہ وکلاء ایک مافیا ہیں جن کے سامنے سب سے زیادہ ہماری عدلیہ بے بس ہے، ہمارے ججز وکلاء کے آگے لیٹ جاتے ہیں ان کو ضمانتیں دے دیتے ہیں ان کے ساتھ صلح کرکے بیک ڈور ڈیلز کرلیتے ہیں، صدیق جان نے کہا کہ عدلیہ کی جانب سے توجیہہ یہ پیش کی جاتی ہے کہ قانون اندھا ہوتا ہے قانون چہرہ نہیں ثبوت دیکھتا ہے۔

صدیق جان نے مزید کہا کہ قاضی فائز عیسی ٰ کے خلاف ریفرنس کی مخالفت کرنے والے حامد خان صاحب آج اس وکیل کے پہلو میں موجود تھے جس نے جسٹس اطہر من اللہ کے خلاف سپریم جوڈیشل کونسل میں درخواست دائر کی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایک طرف آئین و قانون کی سربلندی کی تبلغ کرنے والے چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ کے خلاف غیر مہذب نعرے بازی کرنےوالے وکیلوں کی رہائی کی اپیل کررہے تھے اور موقف اپنا رہے تھے کہ چھوڑ دیں 14، 15 دن تو اندر رہ لیے ہیں اب مزید کتنی سز ا دینی ہے۔

  • ویلڈن صدیق جان سوشل میڈیا کی عوام ان بیغرتوں ظالم وکیلوں اور میڈیا کے غنڈہ گردوں کو اچھی طرح جانتی ھے آپ کو سوشل میڈیا کی عوام ان بیغرتوں بینقاب کرنے پر سلام پیش کرتی ھے


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >