تاریخ میں حج کب کب معطل یا متاثر ہوا؟

تاریخ اسلام میں حج کب کب منسوخ یا متاثر ہوا؟ یہ پہلا موقع نہیں ہے کہ حج کو محدود کر دیا گیا ہو۔ تاریخ میں درجنوں ایسے واقعات کا ذکر ہے جب حج یا تو مکمل طور پر معطل کرنا پڑا یا بری طرح متاثر ہوا۔

سعودی حکومت نے اعلان کیا ہے کہ رواں سال مملکت میں مقیم افرادہی حج کی سعادت حاصل کرسکیں گے۔

سعودی وزارت حج و عمرہ نے بیان جاری کیا ہے کورونا وائرس کے باعث حج کے شرکاء کی تعداد کو محدود رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے، رواں سال سعودی شہری اور اقامہ ہولڈر ہی حج ادا کرسکیں، سعودی وزارت حج کے مطابق سعودی عرب میں موجود صرف غیر ملکی اور مقامی شہری مخصوص تعداد میں شرکت کرسکیں گے۔

سعودی شاہ عبدالعزيز فاؤنڈيشن برائے ريسرچ کے مطابق اسلامی تاريخ ميں 40بار ايسا وقت آيا جب حج کو منسوخ کرنا پڑا

اسلامی تاریخ میں کئی مرتبہ بیماری، کسی تنازع یا دیگر وجوہات کی بنا پرحج منسوخ کیا گیا۔ سعودی شاہ عبد العزیز فاؤنڈیشن برائے ریسرچ کے مطابق 40 مرتبہ ايسا ہوا جب حج کو منسوخ کردیا گیا تھا۔

865ء میں مکہ ميں عازمين کے قتل عام کے بعد ايک حج کو روک ديا گيا۔

10ویں صدی عیسوی ميں خانہ کعبہ پر قبضے کے بعد پہلی بار حج منسوخ کيا گيا۔930 ء میں حج سیزن کے دوران مکہ پرحملہ ہوا جس کے بعد 10 سال تک حج نہ ہوسکا۔سلطنت عثمانیہ کے تاریخ دان قطب الدین کے مطابق قرامطیوں نے نہ صرف حج زبردستی روک دیا بلکہ بڑی تعداد میں حاجیوں کو قتل کیا اور حجرِ اسود کو اکھاڑ کر اپنے ملک لے گئے۔

1831 میں ہندوستان سے پھيلنے والی وبا طاعون سے سينکڑوں حاجی شہيد ہوئے۔

کنگ عبد العزیز سینٹر کے مطابق1837 سے1892 کےدرمیان روزانہ کی بنیاد پر انفیکشن نے سینکڑوں حاجیوں کو شہيد کردیا۔ اس دوران بھی حج جيسے مقدس فريضے کو کئی بار منسوخ کرنا پڑا۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >