سول ایوی ایشن کا سیاحت کے فروغ کے لیے ہیلی کاپٹر سروس شروع کرنے کا اعلان

سول ایوی ایشن کا سیاحت کے فروغ کے لیے ہیلی کاپٹر سروس شروع کرنے کا اعلان

سول ایوی ایشن اتھارٹی (سی اے اے) نے پارلیمنٹ کو آگاہ کیا ہے کہ وہ سیاحوں کے لئے ایک ہیلی کاپٹر سروس متعارف کرانے کے بارے میں سوچ رہے ہیں تاکہ کم وقت میں خوبصورت پہاڑوں ، حسین وادیوں اور ندیوں کو سیاحوں کیلئے قابل رسائی بنایا جاسکے۔

سول ایوی ایشن اتھارٹی کے ڈائریکٹر جنرل نے جمعرات کے روز سینیٹ ایوی ایشن کمیٹی کو اس اقدام سے آگاہ کیا۔ سی اے اے کے ڈی جی خاقان مرتضیٰ نے سینیٹ کمیٹی کو بتایا کہ سیاحوں کے لئے ہیلی کاپٹر سروس متعارف کرانے کا منصوبہ ہے۔ پیپلز پارٹی کے سینیٹر شیری رحمان نے سوال اٹھایا کہ ہیلی کاپٹر کو سیاحت کے فروغ کے مقصد کے تحت کیوں نہیں استعمال کیا جا رہا تھا۔

سوات آپریشن بند کرنے سے متعلق ڈی جی سول ایوی ایشن نے کہا کہ ایک فلائٹ میں صرف چھ مسافروں نے سفر کیا اس لئے سوات آپریشن بند کر دیا گیا۔ سینیٹر شیری رحمان نے کہا کہ آپ سیر و سیاحت کے فروغ کیلئے ہیلی کاپٹر کی سہولت کیوں فراہم نہیں کر رہے، جس پر ڈی جی سی اے اے نے بتایا کہ ٹی پی آر آئی لائسنس جاری کئے جس سے چھوٹے جہاز اور ہیلی کاپٹر کی دستیابی ہو سکے گی، نجی شعبے کے انویسٹرز بھی اس حوالے سے دلچسپی رکھتے ہیں ،سیاحوں کیلئے ہیلی کاپٹر سروس کا پراسیس پائپ لائن میں ہے ۔

ڈی جی سول ایوی ایشن اتھارٹی کمیٹی کے سامنے یہ بھی انکشاف کیا کہ 262میں سے 82 پائلٹوں کے لائسنس جعلی تھے۔ سینیٹر عون عباسی نے پوچھا کہ ان لوگوں کے خلاف کیا ایکشن ہوا جو اس کیس میں ملوث تھے ، کمیٹی نے ڈی جی سی اے اے سے آئندہ اجلاس میں جعلی لائسنس کے معاملے پر رپورٹ طلب کرلی۔

سینیٹر عون عباسی نے کہا کہ کراچی طیارہ حادثہ کے پائلٹس کے لائسنس جعلی تھے تو ملوث افراد پر 302کا مقدمہ ہونا چاہئے ، کیا اس منسٹر سے قبل کسی شخص یا منسٹر کو جعلی لائسنس والا معاملہ پتہ نہیں تھا، منسٹر صاحب نے انکوائری کرا کے بڑا کام کیا انہیں داد دینی چاہئے۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >