معروف کمپنی ایپل کے سسٹم میں 55 غلطیاں، ہیکرز نے سراغ لگا لیا

ایپل کے سسٹم میں معمولی خرابیاں بڑے بڑے آئی ٹی ایکسپرٹ کو نہ نظر آئیں لیکن ہیکرز نے بھانپ لیں، امریکی آئی ٹی کمپنی ایپل کے سسٹم میں 55 خامیوں کو تلاش کرنے کیلئے کمپنی کی جانب سے رضاکارانہ ہیکرز کو رکھا گیا۔

ایپل کے ’بَگ باؤنٹی پروگرام‘ کے تحت 5 ہیکرز پر مشتمل ایک گروپ نے ایپل کے سسٹم میں موجود خامیوں کا تلاش کرلیا، ہیکرز نے تقریباً 3 ماہ کے عرصے کے دوران ایپل کے سسٹم میں 55 خامیوں کو نکالا، جن میں 11 فوری توجہ طلب، 29 انتہائی درجہ کی، 13 درمیانے درجے کی اور 2 کم خطرناک خامیاں شامل تھیں۔

ایپل نے ہیکرز کے اس گروپ کو 3 لاکھ امریکی ڈالرز بھی دیئے، جس کی مالیت پاکستانی 4 کروڑ 91 لاکھ سے زائد بنتی ہے۔

ہیکرز نے اپنے بلاک پوسٹ میں بتایا کہ اپنے کام کے دوران ہم نے مختلف خامیاں تلاش کیں اور یہ خامیاں کمپنی کے بنیادی ڈھانچے میں ہی تھیں،ان خامیوں کے ذریعے انٹرنیٹ پر موجود جرائم پیشہ ہیکرز حملہ کرکے کمپنی کے صارفین اور ملازمین کی اپیلیکیشنز کو اپنے قبضے میں لے سکتے ہیں،اس میں ایک وائرس چلا سکتے ہیں جو صارفین کے آئی کلاؤڈ اکاؤنٹس کا کنٹرول حاصل کرسکتے ہیں۔

رضا کار ہیکرز نے مزید بتایا کہ جرائم پیشہ افراد کمپنی کے سورس کوڈ کو بھی حاصل کر کے ایپل کے اندرونی طور پر تیار کردہ پروجیکٹس تک بھی رسائی حاصل کر سکتے ہیں،ہیکرز کی نشاندہی پر ایپل کمپنی نے سسٹم میں موجود خامیوں کو درست کرلیا۔

امریکی آئی ٹی کمپنی ایپل نے اس پروگرام کا آغاز کچھ سال قبل کیا تھا


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>