ایسے فیچرز جو اینڈرائیڈ کے مقابلے آئی فون صارفین چاہ کر بھی استعمال نہیں کر پاتے

کچھ ایسے فیچرز جو اینڈرائیڈ کے مقابلے آئی فون صارفین چاہ کر بھی استعمال نہیں کر پاتے

دور جدید کے سمارٹ فونز میں اینڈرائیڈ اور آئی فون کا ایک نہ ختم ہونے والا مقابلہ جاری ہے جس میں دونوں اطراف سے ایک دوسرے پر سبقت لیجانے کی کوشش کی جاتی ہے مگر کیا آپ جانتے ہیں کہ مہنگے آئی فون کے صارفین کچھ ایسے فیچرز کو استعمال کرنے سے قاصر ہوتے ہیں جن کو صرف اینڈرائیڈ یوزر ہی استعمال کر سکتے ہیں۔ اس میں سامنے نظر آنے والی تبدیلی جسے کسٹمائز کہا جاتا ہے اس کی خوبی شامل ہے۔

کسٹمائز کرنے کا فیچر:
اینڈرائیڈ فون آپ کو یہ آپشن تک دیتا ہے کہ آپ تھرڈ پارٹی ایپس کو اپنی ڈیفالٹ ایپ بنائیں، اس کے مقابلے میں آئی فون ایک ویلڈ گارڈن ماڈل چلاتا ہے جہاں صارفین طے کی گئی حد سے باہر نہیں نکل سکتے۔ اینڈرائیڈ ذرا کھلا میدان رکھتا ہے اور صارفین کو کافی سارے کنٹرولز دیتا ہے۔

اس میں آپ اپنی ہوم اسکرین کو موسم، کیلنڈر، خبروں کی ہیڈلائنز جیسی معلومات دینے والی وِجیٹس سے سجا سکتے ہیں، یہ آپشن آپ کو اپنے آپریٹنگ سسٹم کو اپنے مزاج کے مطابق ڈھالنے میں مدد دیتا ہے یہی نہیں آپ اینڈرائیڈ میں تھیمز اور لانچرز بھی تبدیل کر سکتے ہیں۔

زیادہ یوزر پروفائلز کا استعمال:
اینڈرائیڈ فونز آپ کو ایک ہی فون پر ایک سے زیادہ یوزر پروفائلز بنانے کی اجازت دیتے ہیں، اس میں آپ کو لاک اسکرین سے ہی لاگ اِن ہونے کا آپشن ملے گا، اگر آپ اپنے بچوں کو استعمال کے لیے موبائل دیتے ہیں، اور چاہتے ہیں کہ وہ آپ کی چیزیں اور میسیجز نہ دیکھیں تو یہ نیا پروفائل بنانے کا آپشن بہت کام آتا ہے، مگر آئی فونز میں ایک سے زیادہ یوزر والی کوئی چیز نہیں اور بلکہ وہ تو فیس آئی ڈی اور ٹچ آئی ڈی جیسے فیچرز کے ذریعے آپ کے علاوہ کسی دوسرے کو ڈیوائس استعمال کرنے سے روکتا ہے۔

ایپ اسٹور کے علاوہ کہیں سے ڈاؤن لوڈنگ کا آپشن:
اسمارٹ فونز کی ایک بہترین چیز اُن میں مختلف ایپس انسٹال کرنے کی صلاحیت ہے جیسا کہ میوزک سننے کے لیے، خریداری کے لیے یا سفر میں راستہ تلاش کرنے کے لیے آپ کو مختلف ایپس مل جائیں گی، آپ یہ ایپس اینڈرائیڈ پر گوگل پلے کے ذریعے یا آئی فونز پر ایپ اسٹور سے ڈاؤنلوڈ کر سکتے ہیں۔

مگر جب معاملہ اِن اسٹورز سے باہر سے ایپس ڈاؤنلوڈ کرنے کا ہو تو آئی فون پر ایسا ممکن نہیں۔ اینڈرائیڈ کے صارفین دوسری ویب سائٹس سے بھی ایپ ڈاؤنلوڈ کر سکتے ہیں لیکن آئی فون پر ایپ اسٹور ہی سب کچھ ہے، وہ نہیں تو کوئی ایپ ڈاؤن لوڈ یا انسٹال نہیں ہو سکتی۔ ایپل کے مطابق ایپ اسٹور کے بغیر ایپس ڈاؤنلوڈ کرنے کا آپشن صارفین کو میلویئر سے بچانے کے لیے ہے۔

3.5mm آڈیو (ہینڈز فری) جیک:
ایپل نے 2016 میں آئی فون سیون لانچ کرتے ہی 3.5مائیکرو میٹر جیک کو الوداع کہہ دیا تھا، یہ وہ عام جیک ہے جو ہم اپنے ہیڈ فون اور ایئرفونز میں استعمال کرتے ہیں، آئی فون اس کی جگہ لائٹننگ کنیکٹر یا وائرلیس ایئرپوڈز کے ساتھ آتا ہے، ویسے تو کچھ اینڈرائیڈ فونز بھی اسی کے نقش قدم پر چل نکلے ہیں اور ان میں 3.5 مائیکرو میٹر جیک نہیں آتی لیکن زیادہ تر اینڈرائیڈ فونز میں اب بھی یہ ہیڈ فون جیک موجود ہے۔

سستی ڈیٹا کیبلز:
اینڈرائیڈ فونز اسٹینڈرڈ مائیکرو یو ایس بی یا یو ایس بی سی کیبل کے ذریعے ڈیٹا ٹرانسفر اور چارج کر سکتے ہیں۔ یہ کیبلز ہر جگہ باآسانی ملتی ہیں، کیبل ٹوٹ جائے یا خراب ہو جائے تو نیا تار بہت کم قیمت پر لیا جا سکتا ہے۔ اس کے مقابلے میں ایپل کی لائٹننگ کیبل ایک آفیشل کیبل ہے جو آپ کو یو ایس بی سی کے مقابلے میں کافی مہنگی پڑے گی۔

  • Android k colors achay hain.
    Android k features achay hain.
    Android k options achay hain.
    Android ki RAM zyada hai.
    Android ki memory zyada hai.
    Android ka camera best hai.

    Magar iPhone … iPhone hai.

    User Experience, touch response and Quality. Iska muqabla Android ka baap bhi nai kar skta Apple se.


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >