صدف کنول لبرل طبقے کی جانب سے تنقید کی زد میں،خلیل الرحمان قمر کا جواب

اداکار شہروز سبزواری سے شادی کے بعد اداکارہ صدف کنول خبروں کی زینت بنی رہی ہیں، اس بار اداکارہ ازدواجی زندگی، شوہر کے درجے اور عورت کے حوالے سے بیان توجہ کا مرکز بنا ہواہے، صدف کنول گزشتہ کئی روز سے سوشل میڈیا پر ٹرینڈ کررہی ہیں جس کی وجہ انکا ایک بیان ہے۔

صدف کنول نے ایک پروگرام میں کہا تھا کہ ان کے نزدیک شوہر کو شوہر سمجھنا چاہئے اور شوہر کا درجہ اوپر ہونا چاہیے،کیوں کہ وہ آدمی ہے، بیوی کو کھلاتا ہے، بچوں کو سنبھالتا ہے،صدف نے واضح کیا کہ وہ بھی کام کرتی لیکن وہ اپنے شوہر کے مقابلے میں ذمہ داری نہیں سنبھال سکتیں۔

صدف کنول نے یہ بھی کہا کہ عورت مظلوم نہیں مضبوط ہے، میں تو اپنے آپ کو بہت مضبوط سمجھتی ہوں،اداکارہ صدف کنول نے فیمینزم پر بھی تبصرہ کیا اور کہا کہ شیری کی ضروریات کا مجھے پتا ہونا چاہئے کیونکہ میں بیوی ہوں،شیری کو بھی میرا پتا ہو پر میری زیادہ ذمہ داری ہے،یہ جو فیمینزم آگیا ہے، یہ لبرلز لوگ ہوتے ہیں، لیکن میرے خیال میں فیمینزم ہے کہ میں آدمی کا اپنے میاں کا خیال رکھوں، اسے عزت دوں اور جو مجھ سے ہوسکا وہ کروں۔

صدف کنول کا یہ بیان سوشل میڈیا صارفین کی توجہ کا مرکز بن گیا، ہیش ٹیگ صدف کنول ٹرینڈ کررہا ہے، بعض لوگوں نے صدف کنول کے بیان سے اختلاف کرتے ہوئے ان کی کردارکشی بھی کی اور لکھا کہ یہ وہی خاتون ہے، جس نے دوسرے کا گھر توڑا ، جس کے بدلے انہیں جوتے اٹھانے کو ملے۔

کچھ لوگوں نے اداکارہ کے بیان پر میمز بھی بنائیں اور ان کی جانب سے شوہر کو شیرو کہنے پر بھی طنز کرتے ہوئے پوسٹس کیں اور ساتھ ہی ان کی جانب سے فیمنزم اور لبرلزم پر بات کیے جانے پر بھی میمز شیئر کیں۔بعض لوگوں نے صدف کنول کو ڈراما ساز خلیل الرحمٰن قمر سے بھی تشبیہ دی اور لکھا کہ دونوں ایک ہی ذہنیت کے مالک ہیں مگر ان کے چہرے مختلف ہیں۔

نجی ٹیلی وژن کے پروگرام میں شریک سماجی رہنما طاہرہ عبداللہ سے اداکارہ صدف کنول کے بیان پر سوال پوچھا گیا تو اس نے صدف کنول پر تنقید کرتے ہوئے جواب دیا کہ میں سمجھتی ہوں کہ اس طرح کی فضولیات میں قوم کی توجہ کو بانٹا جا رہا ہے۔

طاہرہ عبداللہ کا کہنا تھا کہ ہمارے اور بہت سے سنجیدہ قسم کے مسائل ہیں، انھیں چھوڑ کر ہمیں اس قسم کی ٹرک کی بتی کے پیچھے لگانے کی کوشش کی جا رہی ہے۔وہ گھر میں جو مرضی کریں ہمیں مت بتائیں۔

انہوں نے طاہرہ عبداللہ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ ہوتی کون ہیں مجھے بتانے والی کہ میں نے اپنے گھر میں کیا کرنا ہے اور کیا نہیں کرنا ہے۔

معروف رائٹر خلیل الرحمان قمر نے اداکارہ صدف کنول کے بیان کی مکمل تائید کرتے ہوئے کہا ہے کہ شوہر کی خدمت کرنا ان کا ذاتی فعل ہے، انہوں نے اپنی رائے کسی پر بھی مسلط کرنے کی کوشش نہیں کی۔

خلیل الرحمان قمر کا کہنا تھا کہ صدف کنول اپنے شوہر کے جوتے پالش کرے یا انھیں موزے ڈھونڈ کر دے، یہ سراسر ان کا ذاتی فعل اور مسئلہ ہے۔اگر کوئی خاتون اپنے شوہر کی خدمت کیلئے ایسا کرتی ہے تو یہ محبت کی اعلیٰ مثال ہے۔

خلیل الرحمان قمر نے طاہرعبداللہ پر بھی تنقید کی اور کہا کہ یہ خاتون کیوں چلا چلا کر بات کرتی ہیں۔ ان جیسے لوگوں نے میرے سماج کا بیٹرہ غرق کرنے کا ٹھیکہ لیا ہوا ہے۔طاہرہ عبداللہ سب کو خبردار خبردار کہنے والی ہوتی کون ہیں، انہوں نے کہاں سے ایسی گفتگو کرنا سیکھا ہے

خلیل الرحمان قمر نے مزید کہا کہ صدف کنول نے کوئی بری بات نہیں کی، اس نے خواتین کو کوئی قانون بنا کر نہیں دیدیا۔ یا ان کے گھروں میں جھانک کر نہیں دیکھا کہ انہوں نے بھی ایسا ہی کرنا ہے۔

صحافی اور تجزیہ کار محمل سرفراز نے کہا کہ صدف کنول کا یہ بیان انتہائی قابل تشویش ہے۔ یہ کس قسم کی بات ہے کہ میں جوتے بھی اٹھاؤں، اگر آپ نے اپنی فیملی کے لیے کوئی چیز اپنے شوق سے کرنی ہے تو ضرور کریں لیکن یہ کہ عورت یا بیوی کو ہی ایسا کرنا ہے ٹھیک نہیں۔

محمل سرفراز کا کہنا تھا کہ پدرشاہی معاشرے میں ایسی ہی باتیں سکھائی جاتی ہیں۔بہت سے لوگوں کو پتہ نہیں کہ فیمنزم ہے کیا اور بہت سے لوگوں کو لگتا ہے کہ اگر آپ فیمنسٹ ہیں تو آپ اچھی بیوی نہیں بن سکتے۔

محمل نے دعویٰ کیا کہ شوبز شخصیات کی جانب سے ایسے بیان آنے کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ فنکار ڈرتے ہیں کہ خود کو فیمنسٹ کہنے سے ان کے فینز اور فالوورز کم ہو جائیں گے اور یہ ایک حقیقت ہے۔

اداکارہ متھیرا نے اداکارہ صدف کنول کے شوہر سے متعلق بیان پر تبصرے کے بعد ایک سٹوری شیئر کر دیجس پر لکھا تھا کہ اپنے شوہر کے ساتھ محبت سے بادشاہ والا سلوک کریں وہ بھی آپ کو محبت سے ملکہ والی عزت دے گا۔ان کا کہنا تھا کہ ہمارے معاشرے میں کئی جگہ مرد اپنے لیے بادشاہ جیسے سلوک کی خواہش رکھتا ہے لیکن وہ اپنی ملکہ کے ساتھ ویسا ہی سلوک روا رکھنا بھول جاتا ہے۔

      • oye behn k loray, mayn tou uss behnchod ko crtisize krrha hoon, lagta hay phuddi usnay teri maa ki mari hay jo teri gaaand say aisay dhuwan nikal raha hy. tum jesay chootiyo ki baat ki hay jinka yeh nawa baap bun betha hy. Boosri k zara damakh khol k soch, apni gand khol na soch, warna molvi tayyar bethy hayn teri aur tery anay walon ki khuli gaand marnay.
        Wesy jesy teri mounh say bawaseer phooti hy, lgta hy tu pehly hi khaleelo behnchod say gaand marwata hay


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >