لاہور:لڑے کی لڑکیوں کے ساتھ ہاتھا پائی،گالم گلوچ اور فحش اشاروں کی ویڈیو وائرل

ہمارے معاشرے میں خواتین کو ہراساں کرنے کے واقعات تو آئے روز دیکھنے کو ملتے ہیں جب خواتین مردوں کی ہوس بھری نظروں کا سامنا کرنے پر مجبور ہوتی ہیں ایسا ہی ایک واقعہ لاہور میں بھی پیش آیا ۔

لاہور سے تعلق رکھنے والی لینا غنی نامی خاتون نے سوشل میڈیا پر بتایا کہ مشہور جام شیریں پارک میں وہ اپنی دوست کے ساتھ موجود تھیں جب یہ شخص خفیہ طور پر ان کی تصاویر بنانے لگا۔

خواتین نے جب اسے منع کیا تو اس نے نازیبا زبان کا استعمال کرتے ہوئے خواتین کو نہ صرف ہراساں کرتے ہوئے ناصرف گندی گالیاں بکنی شروع کر دیں بلکہ گندے اشارے بھی کیے۔

لینا نے واقعے کو بیان کرنے کے لیے اپنے ٹویٹر ہینڈل سے سلسلہ وار ٹویٹس کیں اور ساتھ ہی ایک ویڈیو بھی شئیرکی۔ ویڈیو میں دیکھا جا سکتا ہے کہ ایک نوجوان انتہائی بدتمیزی کا مطاہرہ کرتے ہوئے ان سے غلیظ زبان کا استعمال کر رہا ہے بلکہ گندے اشارے بھی کر رہا ہے۔

ٹویٹ میں ع؎لینا کا کہنا تھا کہ پاکستانی خواتین کے ساتھ یہ کوئی انہونا واقعہ نہیں بلکہ ویڈیو دیکھ کر آپ کو اندازہ ہو جائے گا کہ ایسا تو ہر روز ہوتا ہے۔

لینا غنی نے مزید کہا کہ پہلے انہوں نے لڑکے کو نظر انداز کرنے کی بہت کوشش کی لیکن وہ پھر بھی باز نہیں آیا ۔ جب اسے منع کیا تو اس کے انکار کے بعد معاملہ کچھ ہی دیر میں شدت اختیار کر گیا۔

انہوں نے بتایا کہ واقعے کی مکمل ویڈیو وہ اس لیے نہیں ریکارڈ کر سکیں کیونکہ اس نوجوان نے ان سے دست درازی کرتے ہوئے انہیں دھکا دیا اور ان کا موبائل بھی چھین لیا۔

خٓاتون نے طنز کرنتے ہوئے کہا کہ اس دست درازی کے دوران کسی کو چوٹ نہیں لگی سوائے اس شخص کی انا کو، جو مکمل طور ہر تباہ ہو گئی۔

اس خاتون نے یہ بھی کہا کہ اس طرح کے واقعات میں مردوں کی جانب سے خواتین کو ہراساں کیا جانا عام ہے مگر اس واقعے میں ملوث یہ شخص ہمارے معاشرے کی صحیح عکاسی کر رہا ہے

انہوں نے اس شخص کے خلاف ایکشن لینے کے مطالبے کے ساتھ، تمام مردوں سے اپیل کی کہ وہ واقعہ کوپرسنلی لیں تاکہ وہ اس طرح کے واقعات سے خواتین کو جو اذیت اور تکلیف محسوس کرسکیں۔

علینا کا کینا تھا کہ “میں تمام مردوں کو اس واقعے پراجتماعی شرمندگی اوراحساس ندامت محسوس کرنے کی دعوت دیتی ہوں۔

دوسری جانب لاہور پولیس نے ویڈیو وائرل ہونے پر لڑکے کو گرفتار کر لیا۔

  • “میں تمام عورتوں کو اس واقعے پراجتماعی شرمندگی اوراحساسں ندامت محسوس کرنے کی دعودیتا ھوں، کیونکہ ایسے لباس پہن کر رمضان المبارک کے مبارک مہینہ میں تم لوگ پارک میں کیا کررہی تھیں، کچھ اللہ کا خوف ھے کہ نہیں،وہ تو بڑا بے غیرت تھا کہ لڑکیوں سے لڑ پڑا اس میں تو شرم نامی کوئی چیز نہیں ھے،اچھا ھوا گرفتار ھوا،مگر عورت کی معنی معلوم ھے کہ کیا ھے،اپنی بے عزتی خود کرواتی ھو،مبارک مہینہ ھے اللہ سے مغفرت مانگو، گھر بیٹھو،مجھے ایسے والدین پر حیرت
    ھوتی ھے ،انھیں پتہ ہی نہیں ھوتا کہ انکی لڑکی کہاں ھے،جب عزت تار تار ھو جاتی ھے تو پہر سر پیٹتے ھیں


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >