حکومت452 ارب کا مقدمہ میڈیا کو جھوٹا قرار دینے کیلئے ہارنا چاہتی ہے؟ کلاسرا

Rauf Klasra

حکومت اس لیے 452 ارب کا GIDCکیس ہارنا چاہتی ہے تاکہ میڈیا کو جھوٹا قرار دیا جا سکے۔ رؤف کلاسرا کا دعویٰ

رؤف کلاسرا نے سپریم کورٹ میں جی آئی ڈی سی کی کاروائی شئیر کرتے ہوئے کہا کہ یہ رپورٹ پڑھ کر آپ کو اندازہ ہو جانا چائیے PTIحکومت GIDC کیس ہارنے کی کتنی بھرپور کوشش کررہی ہے۔ نہ اہم کیس کی تیاری نہ سوالات کے جوابات—چند کاروباری دوستوں کو چند ارب کے ذاتی فائدہ کے لیے یہ 452ارب قوم کے برباد کریں گے؟ اس ملک کا واقعی کوئی وارث نہیں؟

رؤف کلاسرا نے دعویٰ کرتے ہوئے کہا کہ حکومت اس لیے 452 ارب کا مقدمہ ہارنا چاہتی ہے تاکہ میڈیا کو جھوٹا قرار دیا جا سکے اور کاروباری دوستوں کا بھی فائدہ ہو؟ وہی بات رند کے رند جنت بھی ہاتھ سی نہ گئی۔یہ رپورٹ رونگھٹے کھڑے کرنے والی ہے عوام سے اکھٹے کیے گئے اربوں کا مقدمہ اتنی غیر سنجیدگی سے لڑا جارہا ہے۔اے مذاق اے ؟

ایک سوشل میڈیا صارف کے سوال پر رؤف کلاسرا نے کہا کہ کاروباری نے عوام سے ٹیکس لے لیا اور حکومت سے ڈیل کریں آدھے میرے اور آدھے اپ کے۔یہ جائز ہے؟ کاروباری فرماتے ہیں حکومت نے ٹیکس درست استمعال نہیں کیا لہذا وہ جمع کردہ ٹیکس جمع نہیں کراتے۔یہ کاروباری کون ہوتے ہیں اعتراض والے؟عوام پوچھے ہمارا پیسہ کہاں لگا۔یہ کیسے جیب میں ڈال سکتے ہیں

ایک سوشل میڈیا صارف نے رؤف کلاسرا سے سوال کیا کہ کلاسرا صاحب آپکو قوم کے 452 ارب کی اتنی ہی فکر ہے تو خود کورٹ چلے جائیں اور ججز کو حقائق بتائیں تاکہ قوم کا پیسہ چند دوستوں کی جیب میں نہ جاسکے، قوم کو مل سکے

جس پر رؤف کلاسرا نے کہا کہ عدالت میں بحث اس پر ہو رہی ہے حکومت نے ٹیکس کہاں خرچ کیا؟ غلط کیا یا صحیح ؟ بھائی جہاں بھی خرچ ہوا ہو اس پر ان کمپنیوں کو 452 ارب معاف نہیں کیا جاسکتا جو وہ عوام سے لے چکے ہیں۔ بحث اس پر ہونی چائیے کیا عدالت عوام سے اکھٹا کیا گیا ٹیکس معاف کر سکتی ہے؟وہ الگ کیس ہے ٹیکس کہاں خرچ ہوا

ایک اور صارف کے سوال پر کلاسرا نے کہا کہ صدیوں سے یہ خطہ لٹتا رہا ہے اور لٹتا رہے گا۔ رنگیلا کی فلم یاد اگئی جب تک وہ کسی سے دن میں تھپڑ نہ کھاتا اسے رات کو نیند نہ آتی۔ ایک دن اسے کسی نے تھپڑ نہ مارا وہ پوری رات نہ سویا۔ یہی عوام کا حال ہے جس دن کوئی حاکم یا مافیا انہیں نہ لوٹے یہ سو نہیں سکتے۔ کتنے رحم دل ہیں۔

ایک صارف نے سوال کیا کہ کلاسرا صاحب آپ کورٹ میں فریق بن کے کورٹ کو حقائق سے آگاہ کریں ناں۔

جس پر رؤف کلاسرا نے کہا کہ عدالت میں بحث اس پر ہو رہی ہے حکومت نے ٹیکس کہاں خرچ کیا؟ غلط کیا یا صیح؟ بھائی جہاں بھی خرچ ہوا ہو اس پر ان کمپنیوں کو 452 ارب معاف نہیں کیا جاسکتا جو وہ عوام سے لے چکے ہیں۔ بحث اس پر ہونی چائیے کیا عدالت عوام سے اکھٹا کیا گیا ٹیکس معاف کر سکتی ہے؟وہ الگ کیس ہے ٹیکس کہاں خرچ ہوا

ایک اور سوشل میڈیا صارف کو جواب دیتے ہوئے رؤف کلاسرا نے کہا کہ سر غلط صحیح کی بات ہی نہیں ہورہی۔ ٹیکس لگا اور جن جن اداروں پر لگا انہوں نے جیب سے نہیں دیا بلکہ عوام کو شفٹ کر کے ان سے وصول کر لیا۔اب وہ اربوں اس جواز پر نہیں دے رہے کہ حکومت ان کا استمعال درست نہیں کرتی لہذا ان کاروباریوں کو دے دیں؟کاروباری حضرات عوام کو وہ ٹیکس لوٹا دیں گے ؟

واضح رہے کہ حکومت نے جی آئی ڈی سی کی مد میں بڑے کاروباروں کو 210 ارب روپے معاف کئے جس کے بعد توقع کی جارہی تھی کہ کھاد کی بوری میں 400 روپے کمی ہوگی جس کے بعد رؤف کلاسرا اور عامرمتین نے کئی پروگرامز کئے اور یہ موضوع میڈیا پر زیربحث بن گیا۔جس کے بعد وزیراعظم عمران خان نے یہ فیصلہ واپس لے لیا۔

رؤف کلاسرا اور عامرمتین کا دعویٰ ہے کہ انکا پروگرام اس حکومتی فیصلے کے خلاف آواز اٹھانے پر بند کیا گیا ہے۔ اسکے بعد حکومت عدالت چلی گئی جس کے بعد رؤف کلاسرا نے متعدد بار دعویٰ کیا کہ حکومت یہ کیس جان بوجھ کر ہارنا چاہتی ہے۔

  • Its because the court questioned that were the funds were spent and govt had to answer. So if there is a debate on the usage of funds then the debate is ordered by SC judges and govt has no role in it but arastoo sb cant accept that he was wrong

  • I am totally agreed with Klasra . Same way Razzaq Dawood sotting in government keeping 4 important ministries protecting interests of car assemblers mafia, sugar , cement cartels , fertilisers . Nobody can touch them but they are allowed to rob us . If someone tried to raise voice nobody support them from the government we were used to say say chor Dakoo past regimes but this government is keeping same pace as it was happening in past . Their is no institution here who are stopping them of their malpractices. It’s Shame


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >