دو سال قبل اگر واپسی کاکٹھن فیصلہ نہ کرتے تو ایک جج اعتراف جرم نہ کرتا،مریم نواز

دو سال قبل اگر واپسی کا یہ کٹھن فیصلہ نہ کرتے تو ایک جج اعتراف جرم نہ کرتا، مریم نواز

مسلم لیگ ن کی رہنما مریم صفدر نے ٹویٹ کی کہ جب میری والدہ زندگی اور موت کی کشمکش میں مبتلا تھیں اور ووٹ اپنی عزت کی جنگ لڑ رہا تھا عین اس وقت سزا سنانے کے پیچھے جو محرکات تھے وہ آج قوم کے سامنے آ چکے ہیں۔

ٹوئٹر پر اپنی ایک اور ٹویٹ میں مریم صفدر لکھتی ہیں کہ انتقام کو دیکھتے ہوئے ہم اگر دو سال پہلے واپسی کا کٹھن فیصلہ نہ کرتے تو ایک جج اپنے جرم کا اعتراف نہ کرتا اور نہ ہی قوم یہ جان سکتی کہ کیسے نواز شریف کو دباؤ میں آکر بے گناہی کے باوجود ناحق سزا سنائی گئی۔

مریم صفدر نے مزید لکھا کہ وطن کی مٹی گواہ ہے اور گواہ رہے گی۔

کچھ روز قبل چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ نے ویڈیو سکینڈل میں ملوث جج ارشد ملک کو ملازمت سے برطرف کر دیا تھا،یاد رہے یہ وہی جج تھا جس نے نواز شریف کو اسلام آباد کی احتساب عدالت میں العزیزیہ ریفرنس می قید اور جرمانے کی سزا سنائی تھی.

جج ارشد ملک کو ویڈیو اسکینڈل سامنے آنے اور اعتراف جرم کرنے پر عہدے سے ہٹایا گیا تھا.

یاد رہے کہ کچھ روز قبل بھی مریم نواز نے ٹوئٹ پیغام میں چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ کی سربراہی میں انتظامی کمیٹی کے فیصلے پر ردعمل دیتے ہوئے کہا تھا کہ اس فیصلے نے نواز شریف پر ہی نہیں بلکہ عدل و انصاف کے دامن پر لگا ایک بڑا دھبا دھو دیا ہے، آج کا فیصلہ بے شک سچ کی فتح اور جھوٹ کی شکست ہے۔

 

  • اس بیغرت بےشرم غلیظ اور نیچ گھٹیا عورت نے تو خود پریس کونفرنس میں یہ شرمناک اعتراف  کیا تھا کہ اس بٹنی فراری کے پاس اس جج کی پورنو فلم موجود ہے جو اسکے گرگے نے ایک اسٹیج سجا کر جج کو فرام کر کے بنا ئی

    اسکا باپ نواز  شریف بٹ بھی ایسی ہی لعنتی نا[پاک گھٹیا    غلیز حرکتیں کر چکا ہے بینظیر بھٹو اور اسکی والدہ کی جعلی فوٹو شاپ ننگی تصویریں بنوا کے پورے پا کستا ن میں ہیلی کا پٹر سے پھکوا   کر


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >