اداکارہ نائلہ جعفری کے گھر پر حملہ، ہراساں کرنے کی کوشش

گلگت میں رہائش پزیر پاکستان کی مشہور اداکارہ نائلہ جعفری کے گھر 2 نامعلوم افراد نے حملہ کردیا اور گھر پر پتھراؤ کرتے ہوئے انہیں گھر خالی کرنے کی دھمکیاں دی گئیں۔

گلگت کے آئی یو تھانے میں نائلہ جعفری کی جانب سے دائر کردہ درخواست میں کہا گیا ہے کہ نامعلوم ملزمان زور و زبردستی سے ان کا گھر خالی کروانا چاہتے تھے، انہیں تحفظ فراہم کرکے ملزمان کے خلاف جلد از جلد کارروائی کی جائے۔

سوشل میڈیا پر اس واقعے کی ویڈیوز میں دیکھا جاسکتا ہے کہ نائلہ جعفری گھر کے دروازے سے فاصلے پر کھڑے ہوکر چلا رہی ہیں، جبکہ دوسری جانب سے مبینہ طور پر نامعلوم افراد دروازے پر پتھراؤ کررہے ہیں ، دوسری ویڈیو میں وہ دروازے کے درمیان سے ان دونوں افراد کے چہروں کو کیمرے میں قید کرنے کی کوشش کررہی ہیں، اس دوران ایک حملہ آور نے اندر داخل ہوکر ان سے موبائل فون چھیننے کی کوشش کی جس میں نائلہ کے ہاتھ سے موبائل فون نیچے گرگیا۔

مشہور میڈیا آوٹ لیٹ کی جانب سے جب نائلہ جعفری سے اس بارے میں پوچھا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ حملہ آوروں کا مقصد گھر خالی کروانا تھا، میں ڈھائی سال سے گلگت میں رہ رہی ہوں لیکن لاک ڈاؤن سے پہلے میں کراچی میں تھی، میں صرف اور صرف اس لیے واپس آئی تھی تاکہ میں قدرتی مقام پر وقت گزار کر بیماری سے جلد از جلد ریکور کرسکوں۔

نائلہ جعفری کو 2016 میں کینسر کی تشخیص ہوئی تھی جس کا علاج جاری ہے اور اسی وجہ سے وہ شہروں سے دور ایک پرفضا مقام پر رہائش پزیر ہیں ، تاہم لاک ڈاؤن ہونے کے بعد جو کچھ ہوا وہ ان کیلئے ذہنی اذیت کا باعث بنا رہا، کیونکہ وہ نا تو کراچی جاسکتی تھیں اور نہ ہی رہنے کی کوئی اور جگہ تلاش کرسکتی تھیں۔

انہوں نے کہا کہ مارچ کے آخر میں جب میں واپس آئی تو میں نے یہ گھر کرایے پر لیا اور مالک مکان سے کہا کہ میں ایک سال تک یہیں رہوں گی، میں نے چار ماہ کا کرایہ ایڈوانس ادا کیا، مگر لاک ڈاؤن ہونے کے ٹھیک دو ماہ بعد مالک مکان نے مجھے گھر خالی کرنے کا حکم دیا یا اضافی کرایہ ادا کرنے پر مجبور کیا بصورت دیگر اس نے مجھے گھر سے باہرپھنکوانے کی دھمکیاں دیں۔

اداکارہ نائلہ جعفری کے گھر پر حملہ، ہراساں کرنے کی کوشش

نائلہ جعفری نے مزید کہا کہ جب میرے بہت سمجھانے پر مالک مکان کو سمجھ نہیں آئی تو میں نے اس کے خلاف عدالت میں درخواست دائر کردی جس کا مقدمہ ابھی بھی چل رہا ہے، عدالت میں پیش کی گئی دستاویزات کے مطابق مارچ 2020 میں کرایہ پر لیے گئے اس گھر کیلئے نائلہ کو ہر ماہ 12 ہزار کرایہ ادا کرنا تھا، لیکن انہوں نے 50 ہزار ادا کیے جو تقریبا 4 ماہ کا کرایہ بنتا ہے، نائلہ کے شوبز بیک گراؤنڈ کا پتا چلتے ہی مالک مکان نے گھر کا کرایہ 25 ہزار روپے کردیا اور جواز پیش کیا کہ اس نے گھر فروخت کردیا ہے۔

اداکارہ نائلہ جعفری کے گھر پر حملہ، ہراساں کرنے کی کوشش

حالیہ واقعے سے متعلق نائلہ کا کہنا تھا کہ یہ پہلا حملہ تھا جو میرے گھر پر ہوا تاہم اس سے پہلے مجھے بہت بار دھمکایا گیا اور ہراساں کیا گیا تاکہ میں گھر خالی کردوں ، یہ لوگ بھی اسی لیے بھیجے گئے تھے، میں نے جب سے مالک مکان کو پیسے دینے سے انکار کیا ہے مجھے یہاں خطرہ پیدا ہوگیا ہے، وہ کبھی بجلی کی سپلائی معطل کردیتا ہے کبھی پانی بند کردیتا ہے، اس دوران میرے گھر پر دو مرتبہ چوری بھی کی گئی، لیکن میں خاموش رہی کیونکہ میں نے کراچی جانے کا فیصلہ کرلیا تھا ۔

انہوں نے مزید کہا کہ میں نظام کی خرابیوں کو ضرور سامنے لانے کی کوشش کروں گی، ہم ایسے نظام کے ساتھ سیاحت کو فروخت نہیں دے سکتے، میں نے اپنے قیام کے دوران گلگت کی بدترین شکل بھی دیکھی ہے، جنسی زیادتی سے لے کر قتل و غار ت گری تک، یہاں ہر دوسرے دن دریاؤں سے جوان لڑکیوں کی لاشیں ملتی ہیں اور کوئی بھی کچھ بھی ثابت نہیں کرسکتا، مختلف قبیلوں اور بااثر افراد کے جرائم کو چھپایا جاتا ہے جبکہ مجھ جیسے لوگوں اور یہاں کی عورتوں کو ہراساں کیا جاتا ہے۔

واقعے سے متعلق آئی یو تھانے کے ایس ایچ او کا کہنا تھا کہ درخواست پر کارروائی شروع کردی ہے، نائلہ جعفری نے اپنی درخواست میں کسی کو ملزم نامزد نہیں کیا اس لیے ان کے بتائے ہوئے حلیہ پر ہی تفتیش کی جارہی ہے۔

جب کہ دوسری طرف مالک مکان نے نائلہ جعفری کے الزامات کو مسترد کردیا ہے۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >