لاہور: عروسی جوڑے میں ملبوس دلہن اپنے دولہے کو لئے خود کار چلا کر نکاح کی تقریب میں پہنچ گئی

لاہور: عروسی جوڑے میں ملبوس دلہن اپنے دولہے کو لئے خود کار چلا کر نکاح کی تقریب میں پہنچ گئی،

 

یوں تو سوشل میڈیا پر آئے روز حیران کر دینے والی تصاویر اور ویڈیوز دیکھنے کو ملتی ہیں، جو ہمارے معاشرے کی روایات اور معاشرتی رویوں کی عکاسی کرتی ہیں، جو سوشل میڈیا پر اپ لوڈ ہونے کے ساتھ ہی وائرل ہو جاتی ہیں جنہیں صارفین کی جانب سے بھی پسند کیا جاتا ہے۔

اسی طرح لاہور کی ایک دلہن ارسہ بتول نے برسوں سے چلی آ رہی روایات کے برعکس ایسا کام کیا جس نے سب کو حیران کر دیا، ارسہ بتول بیوٹی پارلر سے تیار ہوکر اپنے دولہے کو اسی کے گھر سے شادی والی کار میں لے کر نکاح کی تقریب میں پہنچ گئی، جہاں پہلے سے موجود تمام مہمان دیکھ کر حیران رہ گئے۔

ارسہ بتول کے ہونے والے دولہے نے اس یادگار لمحے کو اپنے موبائل فون کے کیمرے میں محفوظ کر لیا جسے بعد میں سوشل میڈیا پر شیئر کیا گیا، جو دیکھتے ہی دیکھتے وائرل ہو گیا، سوشل میڈیا پر وائرل مذکورہ ویڈیو کو سوشل میڈیا صارفین کی جانب سے بھی خوب سراہا گیا۔

سوشل میڈیا پر وائرل ویڈیو میں دیکھا جاسکتا ہے کہ دلہن فرنٹ سیٹ پر بیٹھی سٹیرنگ سنبھالے ہوئے اپنے دولہے کو ساتھ لیے خود کار چلاتی ہوئی نکاح کی تقریب میں جا رہی ہے، جیسے ہی دلہن اور دولہا اپنی نکاح کی تقریب میں پہنچتے ہیں تو وہاں پر موجود مہمان دلہن کو خود گاڑی چلاتے ہوئے دیکھ کر حیران رہ جاتے ہیں۔

عمومی طور پر اب تک دلہن کو نکاح کے بعد گاڑی کی پچھلی سیٹ پر بیٹھا کر ہی لے جایا جاتا ہے، لیکن لاہور کی اس دلہن نے ناممکن کو ممکن کر دکھایا اور اس لمحے کو اپنی زندگی کا سب سے یادگار لمحہ بنا لیا۔

This is Ersa Batool with her husband on their Barat. Ersa surprised everyone when she took the driving seat of Barat car & drove her husband to their home. 😘

Posted by Muhammad Owais on Saturday, August 1, 2020

 

دوسری جانب ارسہ بتول جو مختلف کپڑوں کے برینڈز کے لیے ماڈلنگ کرتی ہیں کا عروسی جوڑا پہنے گاڑی چلاتے ہوئے تصاویر اور ویڈیوز وائرل ہونے پر اردو نیوز کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی تصاویر اور ویڈیوز میری شادی کی نہیں بلکہ نکاح کی ہیں۔

اردو نیوز سے گفتگو میں ارسہ بتول کا کہنا تھا کہ اس دن ہوا کچھ یوں تھا کہ مجھے صدر میں موجود ہوٹل اسے ڈیفنس کے وینیو تک جانا تھا، چونکہ میرے خاوند دقیا نوسی سوچ پر یقین نہیں رکھتے تو بس مجھے خیال آیا کہ کیوں نہ میں ڈرائیونگ سیٹ پر بیٹھ کر اپنے خاوند کو لے کر وینیو تک جاؤں، تو میں نے ایسا ہی کیا جس پر میرے خاوند نے کوئی اعتراض نہیں اٹھایا۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >