مریم نے اپنے ٹوئٹر ہینڈل پر چینی قونصلیٹ حملے میں ملوث دہشتگردکی تصویرلگا دی

مریم نواز نے دو روز قبل پی ڈی ایم ( پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ) کے زیر انتظام ہونے والے کوئٹہ جلسے میں شرکت کی۔ انہوں نے مقامی افراد کی جانب سے لاپتہ افراد کے حق میں کیے جانے والے مظاہرے میں بھی شرکت کی۔

لاپتہ افراد کے مظاہرے میں بیٹھے ہوئے مسلم لیگ ن کی نائب صدر مریم نواز نے تصاویر بھی بنوائیں جن میں سے ایک تصویر انہوں نے گزشتہ روز ہی اپنے ٹوئٹر اکاؤنٹ پر پروفائل کے طور پر لگا دی۔

اس تصویر کے اپ لوڈ ہونے کے بعد سوشل میڈیا پر طوفان برپا ہو گیا اور مریم نواز کو دہشتگردوں کا آلہ کار کہا جانے لگا کیونکہ اس تصویر میں کالعدم بی ایل اے کے دہشتگرد راشد بروہی کی بھی تصویر موجود ہے۔ راشد بروہی کراچی میں چینی قونصلیٹ پر حملے میں ملوث تھا

اس حوالے سے مریم نواز پر تنقید کرتے ہوئے ایک ٹوئٹر صارف نے لکھا کہ مریم صفدر نے جو پروفائل پکچر لگائی ہے اس میں چینی قونصلیٹ میں ملوث دہشت گرد راشد بروہی کو مظلوم بنا کر پیش کیا جا رہا ہے۔

ملزم راشد بروہی چینی قونصل خانے پر حملے کے دوران نگرانی کرتا رہا اور حملہ آوروں کو مکمل سہولیات فراہم کیں، ملزم کا تعلق کالعدم تنظیم بی ایل اے سے تھا، حملے سے قبل ملزم کو نو لاکھ روپے فراہم کئے گئے۔

حملے کےبعد راشد بروہی بیرون ملک فرار ہوگیا تھا، ملزم سے اہم معلومات حاصل کی گئی ہیں اور جولائی 2019 کو ملزم کو ایک خلیجی ملک سے انٹرپول کے ذریعے گرفتار کیا گیا۔

خیال رہے کہ 23 نومبر 2018 کو چینی قونصلیٹ پر حملے کے دوران تینوں حملہ آور ہلاک جبکہ دو پولیس اہلکاروں سمیت 4 افراد شہید ہوگئے تھے، جن میں باپ بیٹا بھی شامل ہیں۔

ایک صارف نے لکھا کہ یہ اتفاق ہے یا سوچا سمجھا ایجنڈا ہے کہ پی ڈی ایم کا ایک رکن بلوچستان کو الگ کرنے کا مطالبہ کرتا ہے اور مریم نواز راشد بروہی کی تصویر کو پروفائل پر سجا دیتی ہیں جو کہ چینی قونصلیٹ پر حملے میں ملوث تھا۔

ایک اور صارف نے مریم نواز پر شدید تنقید کی اور مسنگ پرسنز کے اس احتجاج اور اس کے حق میں بولنے والوں کو جھوٹا کہا

اسما اظہر نامی صارف نے چینی ایمبیسی کو مخاطب کرتے ہوئے لکھا کہ مریم نواز کی پروفائل میں موجود شخص چینی قونصلیٹ پر حملے میں ملوث تھا۔ اس صارف نے ثبوت کے طور پر تصویر بھی شیئر کی۔

  • مگر حرام زادے غدار نواز شریف بٹ امرتسری کشمیری دلے ہاراں والے کنجر کے حرامی غدار ٹبر کی حرام زادی نانی چار سو بیس کا اصلی ہینڈل کا تو قطر میں۔ جاسم قطری اور جنید کے باپ کے پاس ہے


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >