ریسٹورنٹ منیجر اویس کو جاب کی آفر کرنے پر شہبازتاثیر تنقید کی زد میں

شہباز تاثیر کی کینول ریسٹورنٹ کے اویس نامی منیجر کو جاب کی آفر ۔۔ سوشل میڈیا صارفین نے شہباز تاثیر کوآڑے ہاتھوں لے لیا۔

گزشتہ روز ایک ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہوئی جس میں ریسٹورنٹ کی مالک خواتین انگلش نہ آنے پر اپنے منیجر کا تمسخر اڑارہی ہیں۔

یہ دونوں ماڈرن خواتین ٹھٹھے اڑاتی اور منیجر کو مذاق کا نشانہ بناتے ہوئے تضحیک آمیز لہجے میں کہتی ہیں کہ آپ اندازہ لگائیں اس شخص کے ساتھ ہم اتنے عرصے سے کام کررہے ہیں اور اسے انگریزی کا ایک لفظ نہیں آتا اور یہ ہمارے اتنے اچھے ریسٹورنٹ کا منیجر ہے۔

یہ ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہوئی تو سوشل میڈیا صارفین نے ان خواتین کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا اور سوشل میڈیا پر #BoycottCannoli ٹاپ ٹرینڈ رہا۔

سابق گورنر پنجاب کے صاحبزادے شہبازتاثیر نے ویڈیو منظرعام پر آنے کے بعد اویس نامی نوجوان کو اپنے ہاں جاب کی آفر کی۔

اپنے ٹوئٹر پیغام میں شہباز تاثیر نے لکھا کہ اویس کا نمبر تلاش کرنے میں میری مدد کریں۔ ہم اپنے ادارے "پیس پاکستان” کیلئے اسکی خدمات لینا پسند کریں گے۔

شہباز تاثیر نے مزید کہا کہ ٹویٹر زہریلا ہوسکتا ہے۔ اگر کوئی مکروہ جھوٹ کا جواب نہیں دیتا ہے تو وہ جھوٹ سچ بن جاتے ہیں۔ تو آئیے ایک تبدیلی کے لالے کے لئے کچھ اچھا کریں پاکستان زندہ باد

ہونا تو یہ چاہئے تھا کہ سوشل میڈیا صارفین شہباز تاثیر کی حوصلہ افزائی کرتے لیکن شہباز تاثیر کا ٹریک ریکارڈ دیکھ کر سوشل میڈیا صارفین نے شہباز تاثیر کو آڑے ہاتھوں لیا اور کہا کہ پہلے اپنے ملازموں کو تو تنخواہ دیدو۔ اپنے ملازموں کو تنخواہ دے نہیں سکتے اور تم ایک غریب کی نوکری چھڑوانے پر تل گئے ہو۔

آزاد منش نے لکھا کہ شہباز تاثیر جو اپنے پہلے کے ملازمین کی تنخواہیں نہیں دے سکتا وہ اعلان کر رہا ہے اویس منیجر کو نوکری دینے کا، ایسے لوگ stunt مار کے اگلے کا بھی بیڑا غرق کر دیتے ہیں

ابوعلیحہ نے لکھا کہ شہباز تاثیر، اسلام آباد کے مینیجر اویس کو نوکری دینے کا اعلان کررہے ہیں جسے ان ہی جیسے چغد برگر ویل ڈن برو کہہ کر ریٹویٹ کررہے ہیں۔ شہباز تاثیر کے خلاف اس کے ایک سو بیس سے زاید ملازمین نے تنخواہوں اور واجبات کی ادائیگی کے لئے کورٹ کیس دائر کررکھے ہیں، موصوف جہاں پیش نہیں ہوتے۔

ایک سوشل میڈیا صارف نے لکھا کہ بہن کو وراثت کا شرعی حق دیں، ڈیلی ٹائمز کے ملازمین کو تنخواہ دیں پھر یہاں اویس کو دانہ ڈالیں.

عمران راجہ نے لکھا کہ آپ کہنا چاہ رہے ہیں کیفے کینولی چھوڑے جہاں صرف بے عزتی ہوئی مگر تنخواہ تو مل جاتی ہے۔۔ اور آپ کے پاس آ جائے جہاں ملازمین اپنی تنخواہوں کو رو رہے ہیں ۔۔پائین تُسیں رین دیو

وقاص اقرار نے طنز کرتے ہوئے لکھا کہ امید کے تنخواہ بھی وقت پر مل جائے گی اسے۔ ڈیلی ٹائمز والوں جیسا سلوک نہیں ہوے گا۔

ایک اور سوشل میڈٰیا صارف نے لکھا کہ ڈیلی ٹائمز کے ملازمین کو تنخواہ وقت پر دیا کریں، اتنا ہی بہت ہے۔

ایک اور شخص نے لکھا کہ تنخواہ دو گے کہ مہینوں لٹکائے رکھو گے؟

واضح رہے کہ شہباز تاثیر سابق گورنر پنجاب سلمان تاثیر کے صاحبزادے ہیں، شہباز تاثیر اور انکے بھائی پر الزام ہے کہ انہوں نے اپنے اخبار ڈیلی ٹائمز کے ملازمین کو کئی ماہ سے تنخواہیں نہیں دیں ۔ اسکے علاوہ شہباز تاثیر اور انکے بھائی شہریار تاثیر پر الزام ہے کہ وہ اپنی بہن سارہ تاثیر کو جائیداد سے حصہ نہیں دے رہے جس کے بعد سارہ تاثیر نے اپنا حصہ لینے کیلئے عدالت کا رخ کیا۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >