مریم نواز کے اسسٹنٹ کمشنر سیالکوٹ کی حمایت پرسوشل میڈیا صارفین کا ردعمل

فردوس عاشق اعوان کا اسسٹنٹ کمشنر سیالکوٹ سونیا صدف سےبرتاؤ۔۔ مریم نواز اسسٹنٹ کمشنر سیالکوٹ سونیا صدف کی حمایت میں سامنے آگئیں۔

سیالکوٹ میں سستے رمضان بازاروں میں ناقص اشیا کی فروخت پر ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان اے سی سیالکوٹ سونیا صدف پر برس پڑیں، انہوں نے سونیا صدف کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ تمہیں کس بے غیرت نے اسسٹنٹ کمشنر لگا دیا، افسر شاہی کی کارستانیاں حکومت بھگت رہی ہے۔

انہوں نےمزید کہا کہ آپ کی حرکتیں اسٹنٹ کمشنروالی نہیں ہیں ، آگر آپ اسسٹنٹ کمشنر ہیں تو عوام کا سامنا کریں، ان سے چھپ کیوں رہی ہیں۔ ہر جگہ بہترین کام ہورہا ہے مگر سب سے بُرا حال سیالکوٹ کا ہے۔

ویڈیو منظر عام پر آنے کے بعد مریم نواز اسسٹنٹ کمشنر سیالکوٹ کی حمایت میں سامنے آگئیں اور کہا کہ اپنی ناکامی اور بدترین ارکردگی کا غصہ سرکاری افسران پر نکالنا فرعونیت ہے۔

مریم نواز نے مزید کہا کہ رمضان بازاروں ميں غير معياری،مہنگی اشياء حکومتی نالائقی کا منہ بولتا ثبوت ہیں۔سرکاری افسران آپ کے ذاتی ملازم نہیں۔سيالکوٹ کے رمضان بازار ميں خاتون اسسٹنٹ کمشنر سونیا صدف کے ساتھ ہونے والا سلوک قابل مذمت ہے۔

مریم نواز کے اس بیان پر سوشل میڈیا صارفین کا دلچسپ ردعمل دیکھنے کو ملا، سوشل میڈیا صارفین نے رانا ثناء اللہ کا چیف سیکرٹری پنجاب اور کمشنر کی فیملی کو کچھ دن پہلے دھمکیوں کا کلپ شئیر کرتے ہوئے کہا کہ میڈم منافقت نہ کریں، اسکی بھی مذمت کریں۔ سوشل میڈیا صارفین نے مزید کہا کہ آپ اپنا وقت بھول گئیں جب آپکے چچا کھڑے کھڑے پولیس اہلکاروں کو ہتھکڑیاں لگوادیتے تھے اور آپ لوگ پولیس اور سرکاری افسروں کو مخالفین کو دبانے کیلئے استعمال کرتے تھے؟

ایک سوشل میڈیا صارف نے دو تصاویر شئیر کیں جس میں ایک خاتون پولیس افسر مریم نواز کو سلیوٹ کررہی ہے جبکہ دوسری تصویر میں ایک پولیس اہلکار شہبازشریف کے سامنے سرجھکائے کھڑا ہے

اسد تنولی نے لکھا کہ بات دور کی نہیں ماضی قریب کی ہے جب ایک ملزمہ جسکی لندن تو کیا پاکستان میں بھی کوئی جائیداد نہیں تھی پیشی پر ایک اے ایس پی نے سلوٹ کیا تھا۔ بس وہ ہی ٹھیک تھا۔

کامی نے لکھا کہ شرم تو نہیں آئی ہو گی سرکاری افسران کی افسر شاہی کو تقویت دیتے۔ آپ جیسے ملک دشمن لوگوں کی سرپرستی میں ہی یہ لوگ عوام کو کبھی ریلیف نہیں دے سکتے۔

راشد نامی سوشل میڈیا صارف نے سوال کیا کہ ٹھیک کہا بلکل بات کرنے کا طریقہ سہی نہیں تھا لیکن جو تھورے دن پہلے رانا ثنا نے بڑے ادب سے دھمکیاں دی تھیں، اس کے بارے کیا خیال ہے؟

فدا چوہدری نے کہا کہ جتنی بدتمیزی شہباز شریف صاحب سرکاری افسروں سے کرتے تھے یہ تو اس کے مقابلے میں کچھ بھی نہیں ۔ وہ تو موقع پر کھڑے کھڑے سرکاری افسروں کو معطل کر کے پتھکڑی لگوا دیتے تھے ۔ وہ وقت بھی یاد رکھیں۔

عمر اعجاز نے کہا کہ بالکل صحیح کہا تم نے، اور جو ایک اشتہاری لندن سے پاکستان فوج پر حملہ کرتا ہے وہ کون سی فرعونیت ہے۔ میڑم پہلے اپنے گریبان کو دیکھو پھر دوسروں کو نصیحت کرو ٹوٹیر پہ۔

ایک سوشل میڈیا صارف نے رانا ثناء اللہ کا اسسٹنٹ کمشنر لاہور کو دھمکیوں والا کلپ شئیر کرتے ہوئے مریم نواز سے کہا کہ مریم صاحبہ منافقت نہ کریں اور یہ کلپ بھی دیکھیں۔

  • پنجابی سرکاری افسران کو رام گلی کے دلوں کی لاٹھی سے ھانکے جانے کی عادت پڑ چکی ہے،،، یہ لوگ صرف اُنکو ایسی ڈانٹ کا حقدار سمجھتے ہیں

  • Calibri jhooti and PML-N should be the last party to talk about such issue because Shehbaz Sharif used to scold/humiliate civil servants on regular basis.

    As for the scolding, govt should be taking even harsher measures against those(Govt employees) who don’t perform their duty well but she(Firdous Ashiq Awan) should probably have done all this in more respectful and ethical way.

  • پنجاب کی 35 سالہ غلام/ کرپٹ بیوروکریٹسں آپنے سیاسی باپ نواج کھوتا شریف+شہباز کھوتا شریف کے آگے لیٹ کر خدمات کرتے رھے ھیں آج ان بیوروکریٹس کی حرام خورویاں بند ہوگئی ہیں تو یہ چون چون کر رھے ھیں بیوروکریٹس اور تمام سرکاری ملازمین کا کام عوام کے خدمات اور انصاف مہیا کرنا ھے
    یہ بیوروکریٹس کو ایک بہانہ مل گیا ھے اور اپنی کوتاہیاں کو چھپانے کے لئے اس واقعے کو استعمال کر رھے ھیں یہ بات ٹھیک ھے کہ اس طرح کی کاروائی عوام کے سامنے نہ کیں جاتی اور ان کا ٹرانسفر کر دیا جاتا اور وجہ عوام کو بتا دی جاتی۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >