رمیز راجہ کا زمبابوے سیریز پر متنازع بیان،سوشل میڈیا پر سخت تنقید:بھول گئے زمبابوے نےخطرہ مول لیا

سابق اوپنر اور کرکٹ کمنٹیٹر رمیز راجہ کیلئے پاکستان اور زمبابوے ٹیسٹ سیریز سے متعلق تبصرے کرنا بھاری پڑ گیا، سوشل میڈیا صارفین تنقید کرنے لگے،رمیز راجا نے کہا کہ اگر پاکستان میں اس طرح کی سیزیز کا سلسلہ جاری رہا تو کرکٹ شائقین دوسرے کھیلوں کا رخ کرنے لگیں گے،

انہوں نے مزید کہا کہ زمبابوے کو کچھ وقت کے لئے ٹیسٹ کرکٹ کھیلنا بند کردینا چاہئے اور اپنی توجہ صرف اور صرف محدود اوورز کی کرکٹ کی طرف موڑنی چاہئے۔

زمیز راجا یہ تبصرہ پاکستان کی جانب سے دو میچوں کی ٹیسٹ سیریز میں آرام سے کامیابی حاصل کرنے کے بعد کیا ، انہوں نے کہا کہ دونوں میچوں میں اننگز کی فتح کا مقصد یہ ہے کہ زمبابوے پاکستان سے مقابلہ کرنے کی ہمت نہیں رکھتا۔

زمبابوے کو اس سیریز میں بدقسمتی کا سامنا رہا، کھلاڑیوں کی انجری اور مختلف وجوہات کی بنا پر پہلی ٹیم کے اہم پانچ کھلاڑی ان فٹ ہوئے، جن میں کپتان شان ولیمز ، کریگ اروین ، سکندر رضا ، اور کائل جاریوس شامل ہیں۔

رمیز راجا کے تبصرے کو کرکٹ شائقین نے کچھ خاص پسند نہ کیا ، اور ماہرین انہیں ماضی میں اس طرح کی مختلف سیریز کی یاد دلاتے ہیں،مشہور کرکٹ مصنف ، جارود کمبر نے رمیزراجا کو دنیا میں ٹیسٹ ٹیم کے پہلے نمبر کی تبدیلی کی یاد دلادی۔

معروف کرکٹ صحافی فیضان لکھانی نے زمبابوے کے پاکستان کے خلاف ٹیسٹ ریکارڈ کی نشاندہی کی۔ پاکستان نے 2013 میں اپنے آخری ٹیسٹ دورے پر ٹیسٹ سیریز 1-1 سے ڈرا کی تھی۔

زمبابوے کے صحافی ، ایڈم تھیو نے بھی رمیز کے تبصرے پر تنقید کی ، خاص طور پر اس کے بعد جب سری لنکن ٹیم پر 2009 کے حملے کے بعد زمبابوے 2015 میں پاکستان کا دورہ کرنے والی پہلی بین الاقوامی ٹیم تھی۔

ایڈم نے لکھا کہ بھول گئے زمبابوے نے ایک خطرہ مول لیا اور سالوں بعد مقامی کھیل کی میزبانی نہ ہونے کے بعد پاکستان کا دورہ کیا۔ ، رمیز راجا اس طرح کہ رہے ہیں۔

ارحم نے کہا کہ کوئی براہ کرم ہمارے کرکٹ بابوس کو آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ میں حالیہ میچوں کے ٹیسٹ کے نتائج دکھائیں۔ ٹیسٹ کرکٹ کے کھیل کو بڑھانا نہیں چاہتے ہیں لیکن اس کی موت کے بارے میں مسلسل شکایت کرتے ہیں۔

دیگر صارفین کی جانب سے بھی رمیز راجا کو کھری کھری سنائی گئی۔

  • Rameez is right to some extent. I would rather have that 4 best associate members and the worst test playing team of the last two years play home & away first-class matches and the winner of the tournament gets the right to enter the test playing group for the next two years.


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >