ایس پی خوشاب کی موت کیسے ہوئی؟ سوشل میڈیا پر پھیلائے گئے پروپیگنڈا کی حقیقت

کچھ روز قبل دوران ڈیوٹی ایس پی انویسٹی گیشن خوشاب ملک امتیاز دل کا دورہ پڑنے پر انتقال کرگئے ہیں، جس کی آخری لمحات کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہوگئی

ویڈیو کے مطابق ایس پی خوشاب دیگر افسران کے ہمراہ پہاڑی علاقے میں جاری سرچ آپریشن کی بریفنگ میں مصروف تھے کہ اچانک انہیں دل کا دورہ پڑا اور وہ زمین پر گر گئے۔

بریفنگ کی ویڈیو میں دیکھا جاسکتا ہے کہ اردگرد موجود پولیس افسران اور اہلکار ان کی طرف دوڑتے ہیں ، مگر ملک امتیاز کو آنے والا دل کا دورہ شدید تھا کہ وہ اس سے جانبر نہ ہوسکے۔

ایس پی خوشاب کی اچانک موت کے بعد سوشل میڈیا پر بیٹھے کچھ عناصر کو پروپیگنڈا کا موقع مل گیا اور انہوں نے ملک امتیاز کی ایک تصویر ، جس میں وہ ویکسین لگوارہے ہیں، شئیر کرکے یہ پروپیگنڈا کرنا شروع کردیا کہ ملک امتیاز نے کورونا ویکسین لگوائی تھی جس کی وجہ سے انہیں دل کا دورہ پڑا۔

کچھ سوشل میڈیا نے ایک پرانی تصویر شئیر کرتے ہوئے لکھا کہ ایس پی ملک امتیاز کی کورونا ویکسین لگوانے کے چند گھنٹوں بعد موت ہوگئی۔

جب اس دعوے کی تحقیق کی گئی تو معلوم ہوا کہ ایس پی ملک امتیاز کی یہ تصویر 21 مارچ کی ہے اور یہ ویکسین کرونا ویکسین نہیں ہیپاٹائٹس کی ویکسین تھی۔

دراصل 20 مارچ کو ڈی پی او خوشاب محمد نوید کی سرپرستی میں پولیس لائن جوہرآباد میں ڈی ایچ کیو ہسپتال خوشاب انتظامیہ کی جانب سے ہیپاٹائٹس کیمپ کا انعقاد کیا گیا تھا جس کے تحت پولیس ملازمین کی مفت سکریننگ اور ہیپاٹائٹس ویکسین لگائی گئی تھی جسے جواز بناکر کچھ عناصر نے بغیر سوچے سمجھے پروپیگنڈا شروع کردیا۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>