ترجیح نوازشریف ،عمران خان یا مودی؟ پی ٹی آئی اور لیگی رہنماؤں کے جوابات ، ایک موازنہ

سیالکوٹ ضمنی الیکشن کے بعد سے ن لیگی رہنما ارمغان سبحانی کا ایک کلپ سوشل میڈیا پر وائرل ہورہا ہے۔ یہ کلپ پی پی 38 سیالکوٹ کے نتاظر سے وائرل ہورہا ہے کیونکہ ارمغان سبحانی کے بھائی طارق سبحانی نے اس حلقسے الیکشن میں حصہ لیا تھا اور وہ الیکشن تحریک انصاف کے رہنما سے ہارگئے تھے۔

نوازشریف کی پاکستان کو گالی دینے والے افغان مشیر سے ملاقات، ن لیگی رہنما اسماعیل گجر کے بھارت سے مدد مانگنے ، راجہ فاروق حیدر کے کشمیریوں کو غلام کہنے اور مریم نواز کے آزادکشمیر کی خودمختاری کے حق میں کئے گئے ٹویٹ کے بعد یہ بحث چل نکلی ہے کہ ن لیگ پاکستان کیساتھ ہے یا پاکستان دشمنوں کیساتھ۔ اسی تناظر میں یہ کلپ وائرل ہورہا ہے۔

سوشل میڈیا صارفین مختلف کلپس شئیر کرکے تحریک انصاف اور ن لیگ میں موازنہ پیش کررہے ہیں کہ تحریک انصاف تمام تراختلافات کے باوجود مودی پر نوازشریف کو ترجیح دیتی ہے جبکہ ن لیگ عمران خان سے اس قدر بغض رکھتی ہے کہ وہ مودی کی تصویر کو بھی گھر پر لگانا پسند کرتی ہے۔

نجی چینل کے ایک پروگرام میں واسع چوہدری نے زرتاج گل سے سوال کیا کہ آپ کشتی میں سوار ہیں، آپکے پاس 2 لائف سیونگ جیکٹس ہیں، کشتی میں نریندر مودی اور عائشہ گلالئی سوار ہیں، آپ کس کو لائف سیونگ جیکٹ دیکر بچانا چاہیں گی؟

اس پر زرتاج گل نے جواب دیا کہ عائشہ گلالئی اپنی دشمن ہوسکتی ہے لیکن شاید پاکستان کی دشمن نہ ہو۔

واسع چوہدری نے ن لیگی ایم این اے ارمغان سبحانی جس کے بھائی کو کچھ روز قبل پی پی 38 سے شکست ہوئی، اس سے سوال کیا کہ آپکے پاس 2 تصویریں ہیں جسے آپ نے فریم کرکے لگانی ہیں، ایک تصویر عمران خان اور دوسری نریندرمودی کی ہے، آپ کس کی تصویر لگانا پسند کریں گے؟

جس پر ارمغان سبحانی نے جواب دیا کہ عمران خان سے بہتر ہے کہ میں نریندرمودی کی تصویر اپنے گھر پر لگالوں۔

اس پر ایک کامیڈین نے طنز کیا کہ اس پر میاں صاحب بھی خوش ہوجائیں گے جس پر ارمغان سبحانی نے کہا کہ جی ہاں!

ایسا ہی ایک سوال ایک خاتون میزبان نے فیصل جاوید سے بھی پوچھا کہ دو ٹیبل ہیں، ایک پر نواز شریف دوسرے پر نریندر مودی بیٹھے ہیں، آپ کس کے ساتھ بیٹھنا پسند کریں گے ؟

جس پر جاوید نے جواب دیا کہ آف کوس نواز شریف کے ساتھ


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >