نادیہ حسین کے بیان ”شوہرکی خدمت کرنا بیوی کا فرض نہیں“ پر تبصرے

کچھ روز قبل معروف اداکارہ اور ماڈل نادیہ حسین نے ایک شو میں اپنے شوہر کے ہمراہ شرکت کی جس میں ان سے اینکر نے سوال کیا کہ کیا عورت کا فرض ہے کہ وہ اپنے شوہر کے کام کرے؟

اس سوال پر شوہر کی موجودگی میں ہی نادیہ حسین نے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ نادیہ حسین نے کہا کہ شوہر کے کام کرنا عورت کا فرض نہیں ہے۔

میزبان نے نادیہ حسین سے مزید پوچھا کہ کیا آپ نے کبھی اپنے شوہر کے کام کیے ہیں؟نادیہ حسین نے کہا کہ میں نے کبھی اپنے شوہر کا کوئی کام نہیں کیا کیونکہ یہ میرا بچہ نہیں بلکہ میرے لائف پارٹنر ہیں،اداکارہ نے مزید وضاحت دی کہ اگر بیوی اپنے شوہر کو کھانے دے تو یہ بات غلط نہیں لیکن اگر شوہر حکم دے کر بیوی سے اپنے کام کروائے تو یہ غلط ہے،میں اس چیز کے خلاف ہوں کہ بیوی پہلے اپنے کام کرے اور پھر بعد میں شوہر کے حکم پر اس کے بھی کام کرے۔

اداکارہ نے بتایا کہ میں نے اپنے بچوں کی پرورش بھی اس طرح نہیں کی جیسا ہمارا معاشرہ چاہتا ہے،جہاں مرد کے تمام کام عورت کرے

اداکارہ نادیہ حسین کا یہ کلپ وائرل ہوا تو سوشل میڈیا صارفین نے ملے جلے تبصرے کئے جن میں زیادہ تر نے نادیہ حسین کے بیان کو پسند نہیں کیا۔ سوشل میڈیا صارفین کا کہنا تھا کہ نادیہ حسین کی سوچ دیسی لبرل والی سوچ ہے۔ بیوی کی ذمہ داری ہے کہ وہ شوہر کی ضروریات کا خیال رکھے۔

سوشل میڈیا صارفین نے کہا کہ ہوسکتا ہے کہ اگر ایسا ہے تو پھر بیوی کے خرچے اٹھانا بھی شوہر کی ذمہ داری نہیں ہے، کچھ نے نادیہ حسین کے شوہر سے طنزیہ انداز میں ہمدردی کا اظہار کیا تو کچھ نے نادیہ حسین کی حمایت کی اور کہا کہ دونوں میاں بیوی کو مل بانٹ کر کام کرنے چاہئے اور ایک دوسرے پر بوجھ نہیں بننا چاہئے۔

اس پر سماء ٹی وی کی صحافی ارم زعیم نے طنز کیا کہ پھر اس طرح کی آنٹیز کٹی پارٹیز میں کہ رہی ہوتی ہیں “میرے پرویز کا دوسری کی ساتھ چکر ہے”

امتیاز صدیقی نے تبصرہ کیا کہ مجھے نادیہ حسین کے شوہر سے دلی ہمدردی محسوس ہورہی ہے جب سے سنا ہے شوہر کا کام کرنا بیوی کی ذمہ داری نہیں۔

ضیاء الرحمان کا کہنا تھا کہ یہ سٹیٹمنٹ ان شوہروں کیلیے ہے جو بیوی کی کمائی کھاتے ہیں۔

حسان کا کہنا تھا کہ صدف کنول نے شوہر کے کاموں کو فرض قرار دیا اور کہا میں خوشی سے شوہر کے کام کرتے ہوں تو اس پر تنقید اور میمز۔۔۔ نادیہ حسین نے کہا میں شوہر کے کام نہیں کرتی تو اس پر بھی شور شرابہ تنقید۔۔ پاکستانیوں کیا چاہتے ہو

جویریہ صدیق نے تبصرہ کیا کہ یہ بیوی کی ذمہ داری ہے شوہر کا خیال رکھیں۔

عامرعلی نے لکھا کہ یہ ہیں آپ کے فسادی لبرلز کی تھرڈ کلاس سوچ جو عورت مارچ کے زریعے آپ پر مسلط کرنا چاہتے ہیں ایک بیان دینے کے ڈالر لیتی ہیں ہمارا میڈیا اس جرم میں شریک ہے

سید فیاض علی کا کہنا تھا کہ ٹھیک ہے پھر بیوی کا خرچہ اٹھانا بھی شوہر کی ذمہ داری نہیں ہے۔

نیہا کا کہنا تھا کہ نادیہ حسین نے بالکل غلط اور غیر اسلامی بات کی۔ شوہر کی خدمت کرنا ہی تو ایک وفا شعار بیوی کی اصل زندگی ہونی چاہئے.اس بات میں ہی تو شائد اللّہ نے عورت کا سب سے بڑا دنیاوی سکون اور خوشی رکھی ہے۔

وجیہہ نے تبصرہ کیا کہ ایک صدف کنول تھی جو شوہر کے کام کو اپنا فرض سمجھتی تھی اور ایک یہ نادیہ حسین ہے جو شوہر کی خدمت کو ذمے داری نہیں سمجھتی۔۔۔ مزے کی بات دونوں ہی لبرل ہیں

آمنہ نے نادیہ کی حمایت کرتے ہوئے تبصرہ کیا کہ نادیہ حسین نے غلط بات نہیں کی۔ بیوی خادمہ نہیں ہوتی۔ مگر یہ رشتہ احساس اور محبت کا ہے اک دوسرے کا خیال رکھنے مدد کرنے اور زمہ داریاں بانٹنے سے ذندگی اچھے سے گزاری جاسکتی ہے۔ بیوی گھر کا خیال رکھے اور مرد گھر سے باہر کی ذمہ داری نبھاۓ ۔ اک دوسرے پر اضافی بوجھ ناں ڈالیں

محترمہ آفرین نے طنز کی کیا کہ بیوی کی ذمے داری صرف شوہر کے پیسے حرام کرنا ہے

    • nadia hussain ne apne bayan mein kahi b ye nahi kaha k wo working woman hai aur uss k paas time he nahi hota k wo apne husband ke khidmat ker sake, uss ne poori terha se deny ker dia hai, saaf inkaari hai. Allah in desi Goro ko hidayat de Ameen,

  • Aurat agar earning ker rahi hai to iss ka ye matlab nahi k wo apne husband ko kisi khatir mein he na laaey. ye shaadi ka rishta hai koi partnership nahi. Mard ko b chahiay k agar aurat earning ker rahi hai wo uss se aik b pesa mat ley. but uss aurat ko ye b kahey k mere bacho ke perwarish mein koi kami nahi aani chahiay unhein proper maan ka pyaar tarbiyat milni chahiay.
    magar jab husband he wife k peso ka muhtaaj ho ga to uss ke ouqaat phir sadfar awan jesi he honi hai


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >