مشہور زمانہ نیٹ فلکس سیریز "منی ہائیسٹ” کا پروفیسر پاکستان میں؟

مشہور زمانہ نیٹ فلکس سیریز "منی ہائیسٹ" والا پروفیسر پاکستان میں؟

نیٹ فلکس پر "منی ہائیسٹ” کا پانچواں سیزن آنے سے ایک بار پھر ناظرین کی توجہ اس کی جانب مبذول ہو گئی ہے اور یہ سیزیز زبان زدعام ہے، دلچسپ بات یہ ہے کہ اب کی بار انٹرنیٹ صارفین کو پروفیسر کا ہم شکل مل گیا ہے جو کہیں اور نہیں بلکہ پاکستان ہی میں ہے۔

پروفیسر کا کردار ادا کرنے والے اداکار الوارو مورٹے کا ہم شکل پاکستان میں ایک اسٹور چلاتا ہے جسے ماسک پہنے کام میں مشغول دکھایا گیا ہے۔ تاہم کچھ صارفین کا خیال ہے کہ ڈرامے کی چوتھی قسط میں پروفیسر نے پاکستان سے رابطہ کرنے کا کہا ہے جس کا مطلب ہے کہ پروفیسر جب مشکل میں ہوتا ہے تو وہ پاکستان سے مدد مانگتا ہے۔

یاد رہے کہ پروفیسر کا کردار اس ڈرامے میں چوری کی ایک بہت بڑی واردات کا ماسٹر مائنڈ ہے جو کہ چیزوں کو پیچھے بنکر میں رہ کر چلاتا ہے اور اپنے کارندوں کو سمجھاتا ہے کہ کب کیا کرنے کا وقت ہے۔

دوسری جانب پروفیسر کا ہم شکل جس کی تصویر دیسی سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہے وہ اپنی کریانے کی دکان چلا رہا ہے اور اس دوران حساب کتاب میں مشغول ہے، حیران کن طور پر اس نے پروفیسر کی عینک سے ملتی جلتی عینک بھی لگا رکھی ہے جس نے اس کی مشابہت پروفیسر سے اور بڑھا دی ہے۔

مومنہ نجم نامی صارف نے سوال اٹھایا کہ پروفیسر پاکستان میں کیا کر رہا ہے۔

وجیہ سید نے پروفیسر کو پاکستان میں خوش آمدید کہتے ہوئے فوٹو شیئر کی ہے۔

واصف رحمان نے کہا چونکہ اب میڈرڈ پروفیسر کیلئے محفوظ مقام نہیں رہا تو اس نے پاکستان آنے کا منصوبہ بنا لیا۔

عائشہ خان نے کہا کہ بالآخر انہیں بھی پاکستان میں پروفیسر مل ہی گیا۔

لقمان شاہ نے کہا کہ انہیں لگتا ہے کہ پروفیسر اپنی اگلی سیریز پاکستان میں بنانے والا ہے۔

ٹھگ نے کہا کہ پروفیسر اپنی اگلی چوری کیلئے منصوبہ بندی کر رہا ہے۔

عبدالمعید احمد نے کہا حتیٰ کہ پروفیسر مشکل حالات میں پاکستان سے مدد طلب کرتا ہے۔

عمار منج نے کہا کہ منی ہائیسٹ کا سب سے بہتر سین وہ ہے جب پروفیسر پاکستان سے مدد طلب کرنے کا کہتا ہے۔

جواد الاسلام نے کہا کہ اس کیلئے یہ بڑے فخر کی بات ہے کہ پروفیسر مشکل حالات میں پاکستان سے مدد لینے کا کہتا ہے۔

وجاہت نصیر نے کہا کہ پروفیسر پاکستان میں آکر کریانے کے کاروبار سے وابستہ ہوگیا ہے۔

ایک صارف نے کہا کہ پروفیسر کو پاکستانی پولیس نے رنگے ہاتھوں گرفتار کر لیا تھا اور اپنی سزا کاٹنےکے بعد اس نے کریانے کی دکان کھول لی ہے۔ اور پکا ارادہ کیا ہے کہ اب وہ چوروں والی نہیں بلکہ شریفانہ زندگی گزارے گا۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>