فکسنگ میں ملوث کرکٹرز اور بکیز کو پھانسی دینے کا قانون بنایا جائے،جاویدمیانداد کا وزیراعظم سے مطالبہ

تفصیلات کے مطابق پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق عظیم کھلاڑی جاویدمیانداد کا خبر رساں ادارے سے گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ جب تک بکیز کو سزا نہیں ہوگی کھلاڑی ایسے ہی میچ فکسنگ اور سپاٹ فکسنگ میں ملوث ہوتے رہیں گے۔

وزیراعظم عمران خان کو چاہیے کہ اس سب کی روک تھام کے لیے ایسا قانون بنوائیں جس کے تحت میچ فکسنگ میں ملوث کھلاڑیوں کے ساتھ ساتھ بکیز کو بھی پھانسی دی جائے تاکہ دوسرے کھلاڑی عبرت حاصل کرسکیں۔

پاکستان کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان جاوید میاں داد کا میچ فکسنگ میں ملوث کھلاڑیوں اور بکیز کو پھانسی کی سزا دینے کے قانون کا مطالبہ کرتے ہوئے کہنا تھا کہ 1999 کے ورلڈ کپ میں میچ فکسنگ کا اندازہ ہو گیا تھا جس کے باعث میں نے کپتانی چھوڑ دی۔

جاوید میانداد کا کہنا تھا کہ میچ فکسنگ کرنے والے کھلاڑی اپنے ملک کے ساتھ غداری تو کرتے ہی کرتے ہیں اپنے خاندان اور مداحوں کے جذبات کو ٹھیس بھی پہنچاتے ہیں۔ سابقہ قومی فاسٹ باؤلر عطاالرحمن کی مثال آپ کے سامنے ہے کہ وہ آج رو رہا ہے کہ مجھے پھنسایا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ عطاالرحمان کو اس وقت اکسایا گیا جس کا آج بھی اسے پچھتاوا ہوتا ہے۔

جاوید میاں داد نے وزیراعظم عمران خان سے میچ فکسنگ میں ملوث کھلاڑیوں کے خلاف سخت سے سخت قوانین بنانے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ اپنی زندگی میں وزیراعظم جتنی کرکٹ کھیل چکے ہیں انہیں چاہیے کہ پاکستانی کھلاڑیوں کو میچ فکسنگ کے ناسور سے محفوظ رکھنے کے لیے سخت سے سخت قوانین بنائے کیوں کہ پاکستان میں قوانین کے کمزور ہونے کی وجہ سے میچ فکسنگ میں ملوث کھلاڑی آسانی سے بچ نکلتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ عطاءالرحمان ، سلیم ملک و دیگر کھلاڑیوں نے چند پیسوں کے عوض اپنے ملک کو بیچ دیا۔جسٹس قیوم کمیشن کو میچ فکسنگ کے متعلق بہت کچھ بتایا لیکن پھر بھی کھلاڑی بچ نکلے۔اورجن کھلاڑیوں کو پاکستان کرکٹ بورڈ سے دور رہنا چاہیے تھا وہ آج پاکستان کرکٹ بورڈ کے اندر بیٹھے ہیں۔


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >