یونس خان اور پی سی بی کی راہیں کیوں جدا ہوئیں؟اختلافات کی وجہ سامنے آگئی

یونس خان اور پی سی بی کے مابین اختلافات کی وجہ سامنے آگئی

یونس خان نے پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) سے شدید اختلافات کے باعث علیحدگی اختیار کر لی، پی سی بی اور یونس خان کے درمیان بیٹنگ کوچ کا معاہدہ ختم ہوگیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق قومی کرکٹ ٹیم کے بیٹنگ کوچ یونس خان اور کرکٹ بورڈ کے درمیان اختلافات کی اندرونی کہانی سامنے آگئی، پی سی بی سے شدید اختلافات کے باعث یونس خان نے مینجمنٹ سے علیحدگی اختیار کر لی۔

پی سی بی مینجمنٹ کا کہنا تھا کہ یونس خان دورہ انگلینڈ سے قبل لاہور کے بائیو سکیور ببل میں رپورٹ کرنے میں ناکام رہے۔ یونس خان نے تاخیر سے ببل میں رپورٹ کرنا تھی اور اس دوران پی سی بی کے اعلیٰ عہدیدار ان کے ساتھ بات چیت کے ذریعے اختلافات ختم کرنے کی کوشش کرتے رہے تاہم کامیابی نہیں مل سکی۔

یونس خان کو متعدد امور پر پی سی بی انتظامیہ سے اختلافات تھے۔ جنوبی افریقا کے خلاف رواں سال کے آغاز پر ہوم ٹیسٹ اور ٹی ٹونٹی سیریز سے پہلے سابق کپتان محمد یوسف کو قومی ٹیم کے کیمپ میں بھیجنا بھی یونس خان کو اچھا نہیں لگا تھا، یونس خان کو نیشنل ہائی پرفارمنس سینٹر (این ایچ پی سی) کے کوچز اور ان کے طریقے پر بھی تحفظات تھے جس پر پی سی بی چیف ایگزیکٹو وسیم خان نے ذاتی کوششوں سے یونس خان کو بیٹنگ کوچ کی پوزیشن سنبھالنے کیلئے راضی کیا تھا۔ یونس خان نے سی ای او وسیم خان کو بھی اپنے تحفظات سے آگاہ کیا تھا۔

ماضی میں بھی یونس خان انڈر 19 کا کوچ بننے سے بھی انکار کرچکے ہیں جبکہ 3 سال قبل وہ نیشنل کرکٹ اکیڈمی میں مناسب کمرہ نہ ملنے پر کوچنگ کورس چھوڑ کر چلے گئے تھے، 2006ء میں یونس خان نے اچانک کپتان کے عہدے سے بھی دستبرداری اختیار کرلی تھی، اپنے کرکٹ کیریئر کے دوران بھی یونس خان کے کرکٹ بورڈ کے ساتھ تعلقات ناخوشگوار رہتے تھے یہی وجہ ہے کہ یونس خان کا بیٹنگ کوچ کی حیثیت سے ذمہ داریاں سنبھالنا ناقدین کے لیے حیران کن تھا۔

واضح رہےکہ یونس خان کو گزشتہ سال نومبر میں 2 سال کے لیے قومی ٹیم کا بیٹنگ کوچ مقرر کیا گیا تھا، اپنے عہدے سے علیحدگی کے بعد اب دورہ انگلینڈ میں قومی کرکٹ ٹیم کو بیٹنگ کوچ کی خدمات میسر نہیں ہوں گی تاہم دورہ ویسٹ انڈیز کے لیے یونس خان کے متبادل کا فیصلہ مناسب وقت پر کیا جائے گا۔

قومی ٹیم کا دورہ انگلینڈ 25 جون سے 20 جولائی تک شیڈول ہے، اس دورے میں 3 ون ڈے اور 3 ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میچز شامل ہیں۔

قومی ٹیم 21 جولائی کو ویسٹ انڈیز روانہ ہوگی جہاں اسے 24 اگست تک 5 ٹی ٹوئنٹی اور 2 ٹیسٹ میچز کھیلنا ہیں۔

  • یونس خان کا رویہ بلکل بچوں جیسا ہے، بات بات پر روٹھ جانا.
    اس کا مزاج پروفیشنل نہیں ہے، اسے اگلی دفعہ کنٹریکٹ نہیں دینا چاہیے.


  • Featured Content⭐


    24 گھنٹوں کے دوران 🔥


    From Our Blogs in last 24 hours 🔥


    >