پی ایس ایل 6: مزید 3 افراد کرونا وائرس میں مبتلا، تعداد 4 ہو گئی

پاکستان سپر لیگ کے چھٹے ایڈیشن کی فرنچائز اسلام آباد یونائیٹڈ کے کھلاڑی فواد احمد میں کرونا وائرس کی تصدیق کے بعد مزید تین افراد میں کرونا وائرس کی نشاندہی ہوئی ہے، جس کے بعد کرونا وائرس کے کنفرم مریضوں کی تعداد چار ہو گئی ہے۔

پاکستان کرکٹ بورڈ کے میڈیا ڈائریکٹر سمیع برنی کا اس حوالے سے ہنگامی پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہنا تھا کہ آج ہونے والے کرکٹ میچ میں تماشائیوں کے لئے ایس او پیز پر نظر ثانی کی جائے گی اور آرگنائزنگ کمیٹی اس حوالے سے اہم فیصلہ کرے گی جبکہ جمعرات کو ایک بار پھر سب کے کورونا ٹیسٹ کیے جائیں گے۔

پی سی بی کے میڈیا ڈائریکٹر کا پریس کانفرنس میں کہنا تھا کہ کھلاڑیوں کے لیے بائیو سکیور ببل میں کسی قسم کی کوئی کمی نہیں چھوڑی گی اور گراؤنڈ اسٹاف کو بھی کرونا ایس او پیز پر سختی سے عمل درآمد کرنے کی تاکید کی گئی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ پی ایس ایل کی فرنچائزز کے اونرز بھی کرونا وائرس کے ٹیسٹ منفی آنے کے بعد ہی اپنی ٹیموں کو جوائن کر رہے ہیں اور تاحال 50% تماشائیوں کو گراؤنڈ میں آنے کی اجازت ہو گی، بائیو سکیور ببل کےلیےبہترین انتظامات کیے گئے تھے، آج شام کا میچ شیڈول کے مطابق ہوگا۔

پی سی بی کے میڈیا ڈائریکٹر سمیع برنی کا کہنا تھا کہ اب تک 244 پی سی آر ٹیسٹ کروائے گئے ہیں، ان  میں سے تین پازیٹیو آئے ہیں۔ ٹیسٹ پازیٹیو آنے والوں میں دو غیر ملکی کھلاڑی اور ایک سپورٹنگ اسٹاف شامل ہے۔ ایک کھلاڑی کا تعلق اسلام آباد یونائیٹڈ سے ہے، کورونا پازیٹیو آنے والوں کو قرنطینہ کر دیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان سپر لیگ کی ٹیکنیکل ٹیم پی ایس ایل کی فرنچائزز کے اونرز کی ساتھ اہم میٹنگز کر رہی ہیں جب کہ تمام ٹیموں کے کھلاڑیوں کو ایس او پیز پر سختی سے عمل درآمد کرنے کا کہا گیا ہے، کوشش کر رہے ہیں کہ اب مزید کرونا وائرس کے کیسز سامنے نہ آئیں، اس وقت ہم مختلف چیلنجز کا سامنا کر رہے ہیں۔

بعد ازاں پاکستان کرکٹ بورڈ کے میڈیا ڈائریکٹر کا پریس کانفرنس میں مزید کہنا تھا کہ مزید 3 افراد میں کرونا وائرس کی نشاندہی ہوئی ہے۔ ہم ان کے نام ظاہر نہیں کر سکتے لیکن جن افراد میں کرونا کی نشاندہی ہوئی ہے ان کے اپنے خاندان والوں سے رابطہ ہے اور اس وقت بائیو سکیور ببل میں تین سو افراد ہیں، تاہم جن افراد کے ٹیسٹ مثبت آئے ہیں وہ دس دن تک قرنطینہ میں رہیں گے۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>