پی ٹی اے کی ملک مخالف مواد کی تشہیر کرنے والوں کے خلاف بڑی کارروائی

پی ٹی اے کی ملک مخالف مواد کی تشہیر کرنے والوں کے خلاف بڑی کارروائی

پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی (پی ٹی اے) کی درخواست پر مختلف سوشل میڈیا پلیٹ فارمز نے پاکستان میں ریاست مخالف مواد کی تشہیر اور نشر کرنے والی مختلف ویب سائٹس اور پلیٹ فارمز کو بند کر دیا۔

پی ٹی اے کے مطابق دہشتگردوں کی سرگرمیاں محدود کرنے کیلئے سوشل میڈیا کمپنیز نے مختلف پلیٹ فارمز سے 25 ہزار یو آر ایل (URL) بلاک کردیئے ہیں۔

ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی کی جانب سے دی جانے والی تفصیلات کے مطابق فیس بک نے 25 ہزار، ٹوئٹر نے 307 اکاؤنٹس جبکہ یوٹیوب نے 224 لنکس کو بند کیا ہے۔  پاکستان مخالف سرگرمیوں میں ملوث 24 ویب سائٹس بھی بلاک کی گئی ہیں۔

یو آر ایل ہے کیا؟

ہر ویب سائٹ ایڈریس کو یو آر ایل (یونیفار ریسورس لوکیٹر) کہتے ہیں۔ اس کی مدد سے کسی بھی ویب سائٹ تک پہنچا جاتا ہے یا پھر یوں کہہ لیجیے کے انٹرنیٹ پر پڑی کسی بھی خاص چیز تک پہنچنے کے لیے یا آئیڈینٹیفائی کرنے کے لیے ہمیں جس چیز کی ضرورت ہوتی ہے اسے یو آر ایل کہا جاتا ہے۔

ویب سائٹس کے یو آرایل بند کرنے سے ان ویب سائٹس تک کسی بھی صارف کی پہنچ نہیں ہو گی اور یہ کسی بھی طرح سے کسی سوشل میڈیا پلیٹ فارم سے اپنی یا اپنے مواد کی تشہیر نہیں کر سکیں گی۔

پی ٹی اے حکام کا کہنا ہے سب سے زیادہ ریاست مخالف سرگرمیوں میں فیس بک کے مختلف گروپس اور آئی ڈیز بلاک کی گئی ہیں اس کے علاوہ ڈیلی موشن سے بھی کچھ اکاؤنٹس بلاک ہوئے ہیں اور آئندہ بھی اسی طرح ایکشن کا سلسلہ جاری رہے گا۔


Featured Content⭐


24 گھنٹوں کے دوران 🔥


From Our Blogs in last 24 hours 🔥


>